بدھ، 25 اکتوبر، 2006

پہلی بار

ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:20 PM ,
َِ
تیری فرقتوں کے قصے
تیرے وصال کی باتیں
وہ جو گزرگئے ہیں بہت سے
ان گزرے مہ و سال کی باتیں
کچھ ماضی کے قصے
کچھ حال کی باتیں
وہ قربتوں کے قصے
وہ دوریوں کی باتیں
میری بے قراریوں کے قصے
تیری مجبوریوں کی باتیں
جیسے سب مٹ سا گیا ہے
اور میں
اب بھی وہیں‌کھڑا ہوں
جب میں نے
پہلی بار
آنکھوں میں‌خواب لیئے
ہاتھوں میں گلاب لیئے
لرزتے لبوں سے
تمہیں عید مبارک کہا تھا

Back Top

0 تبصرے:

ایک تبصرہ شائع کریں

براہ کرم تبصرہ اردو میں لکھیں۔
ناشائستہ، ذاتیات کو نشانہ بنانیوالے اور اخلاق سے گرے ہوئے تبصرے حذف کر دئیے جائیں گے۔