اتوار، 2 ستمبر، 2007

پھر توقع رکھو کہ تم پر آفتیں ایسے آئیں جیسے تسبیح ٹوٹ جانے سے دانے یکے بعد دیگرے گرتے ہیں

ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:28 AM ,

ایک کے بعد ایک، جیسے لائن میں لگی ہوئی آفتیں یکے بعد دیگرے وقوع پذیر ہورہی ہیں۔ اب کل کراچی میں پل گرگیا ہے۔ سنتے ہیں اپنے مشرف صاحب کے میگا پروجیکٹس، جن کا وہ تسبیح کی طرح ہی ہر انٹرویو میں ورد کیا کرتے ہیں یہ بھی حصہ تھا۔ اب ہوا کیا کہ این ایل سی کو بلیک لسٹ کردیا گیا ہے۔ چار پانچ لوگوں کو معطل کردیا گیا ہے۔ مرنے والوں کو امداد دی جارہی ہے ۔ اللہ اللہ خیر صلا


دو چار میں شور رہے گا پھر وہی پرانی صورت حال۔ سارا ناردرن بائی پاس دوبارہ تو بننے سے رہا۔۔اتنا حصہ پھر سے بن جائے گا اور کام پھر چلے گا۔ لیکن اس چیز کی کیا گارنٹی ہے کہ ایک حصہ گرگیا تو باقی حصے نہیں گریں گے۔ یہ پل تو دوبارہ بن جائے گا وہ چنے والا جو اپنے بچوں کا کفیل تھا، جس کے بچے یتیم ہوگئے ان کا کون سرپرست ہوگا اب۔ جو بیوائیں ہوگئیں ان کا کون رہ جائے گا۔ وہ پانچ پانچ لاکھ روپے؟؟


کراچی کے ناظم صاحب کو گلہ ہے کہ اس شہر کے 13 سرپرست ہیں اور یہ کہ انھیں اس پروجیکٹ کی ہوا بھی نہیں لگنے دی گئی، ان کے پاس ڈیزائن تک نہیں یہ وہ ۔ ہر کسی کو ایک دوسرے سے گلہ ہوگا۔۔اور ہم منہ دیکھیں گے الزام کس کو دیں۔۔۔


کبھی کبھی میں سوچتا ہوں کہ یہ جو آفتوں کی قطار لگی ہوئی ہے یہ ہمارے اپنے اعمال ہیں۔۔ہم ہیں ہی اس قابل کہ ہمیں چھتر پڑیں اور پڑتے ہی چلے جائیں۔۔۔


 

Back Top

10 تبصرے:

  1. بس یار کیا تبصرہ کروں.. کچھ الفاظ ہی نہیں مل رہے.. ان پلوں کو بنانے میں انہوں نے نہ جانے کتنے لوگوں کو بے گھر کیا ہے.. اور جو شہر نے ٹریفک جام کی تکلیفیں سہی ہیں وہ اس کے علاوہ ہیں.. مگر پھر بھی کمبختوں نے اپنا کام ایمانداری سے نہیں کیا..

    میں جانتا ہوں کہ اگر ایک حصہ کیا پورا کا پورا پل ہی گرجاتا تو پھر بھی کچھ نہیں ہونا تھا.. کجا کہ ہم ایک حصہ کو روئیں.. حصہ بن جائے گا.. کچھ عرصہ اور شیرشاہ والوں کو ٹریفک جام سہنا پڑے گا.. جہاں پہلے ہی سڑکیں پتھر کے زمانے کا نظارہ پیش کر رہی ہیں.. نئی حکومت آئے گی اور وہ کمپنی پھر کوئی اور پل بنا رہی ہوگی..

    واقعی گناہ ہمارے ہی ہیں..

  2. شاکر ابھی تک بڑے لوگ یہ تنقیدسُن رہے ہیں کچھ دنوں بعد بولیں گے کیا ہوا پُل تو امریکا میں بھی گرتے ہیں۔

  3. این ایل سی کو بلیک لسٹ نہیں‌ کیا گیا، بلکہ اس فرم کو بلیک لسٹ کیا گیا ہے جس نے کنسلٹنسی فراہم کی تھی۔ سٹی ناظم کا شکوہ نیا نہیں‌ اور ان کی حکومت کو اس سلسلے میں‌ الزام دینا اسلئے غلط ہے کیونکہ نادرن بائی پاس قومی ہائے وے اتھارٹی نے تعمیر کیا تھا۔ اس کی تعمیر میں‌ کسی شہری ادارے نے نہ حصہ لیا نہ کبھی ان سے کوئی رائے طلب کی گئی۔ گرچہ یہ منصوبہ ازبس ضروری تھا لیکن سوال یہ ہے کہ کراچی کے شہری ان آفات ناگہانی پر کس سے سوال کریں؟ یعنی حد ہوگئی اب راہ چلتے لوگوں‌ پر پل گرنے لگے ہیں۔ عجیب بے حسی ہے۔

    پانچ لاکھ روپے فی کس معاوضہ اتنا ارزاں‌ ہے شہریوں‌کا قتل عام۔

  4. ذلالت ہے یار یہ سب۔ اور سب ہمارے چپ رہنے کی وجہ سے ہے۔

    محمد شاکر عزیز at 2 ستمبر، 2007 2:38 PM
  5. یہ بات آپ کی بجا ہے مکی بھائی کہ ان پلوں اور سڑکوں کے لیے عوام کو جانے کتنی خواری سہنی پڑتی ہے۔ ہمارے ایک اوور ہیڈ بننا تھا، ساتھ کچی بستی تھی اس کو خالی کروانے کے لیے اچھے خاصے پاپڑ بیلنے پڑے تھے۔ کوئی اپنا گھر کیسے چھوڑتا ہے ایسے ہی تو نہیں چھوڑ دیتا۔
    ان کا کیا جاتا ہے بھئی، پیسے عوام کے لگ رہے ہیں۔۔۔خون پسینہ ان کا بہہ رہا ہے۔

    محمد شاکر عزیز at 3 ستمبر، 2007 6:31 AM
  6. Shukar hai mutalqa wazeer, sadar sahib, waseer e azam, army chief sub bhai log hain warna is haadsay ko bhee Punjab kee sazish qarar day diyya jata..۔۔۔

    Musharraf ka bhai at 4 ستمبر، 2007 9:22 AM
  7. Karachi ka bera garq karnay walay Karachi say hee hain...

    Musharraf ka bhai at 4 ستمبر، 2007 9:26 AM
  8. سارے ایک ہی تھیلی کے چٹے بٹے ہیں بھیا۔
    وہ دن گئے جب پنجاب ہی قصور وار ہوتا تھا۔ پنجابی بھی تنگ ہیں اب تو حکومت سے۔
    آپ اردو میں لکھتے تو مجھے خوشی ہوتی۔۔

    محمد شاکر عزیز at 4 ستمبر، 2007 3:12 PM
  9. پُل بنایا این ایل سی نے جو خالص فوجی ادارہ ہے ۔ بنوایا نیشنل ہائی وے اتھارتی نے جس کے سربراہ عرصہ دراز سے یکے بعد دیگرے جوجی جرنیل ہوتے ہیں اور جو پورا محکمہ فوجیوں سے بھرا پڑا ہے ۔ تعمیر کے دوران انسپیکشن کی ذمہ داری اسی ادارے کی ہوتی ہے ۔ مگر ان کو کوئی کچھ نہیں کہہ سکتا ۔

  10. فوجی بادشاہ جو ہوئے سرکار۔
    کس کی مجال ہے جو کچھ کہہ دے۔

    محمد شاکر عزیز at 4 ستمبر، 2007 4:57 PM

ایک تبصرہ شائع کریں

براہ کرم تبصرہ اردو میں لکھیں۔
ناشائستہ، ذاتیات کو نشانہ بنانیوالے اور اخلاق سے گرے ہوئے تبصرے حذف کر دئیے جائیں گے۔