سوموار، 29 جون، 2009

گلوبل سائنس کی ویب سائٹ

18 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 3:21 PM ,
جون 2009 کے گلوبل سائنس سے پتا چلا کہ اس کی ویب سائٹ کا اجرا کیا جاچکا ہے۔ حسب توقع ویب سائٹ بڑی تعارفی قسم کی ہے جس میں حتی الامکان ہر چیز کا خلاصہ ہی دیا گیا ہے۔ ویب سائٹ ابھی تک زیر تعمیر ہے اور اس میں کئی سیکشن موجود ہی نہیں جیسے پچھلے شمارے۔ لیکن اس سب کے علاوہ جس چیز نے مجھے حیران کیا وہ 2005 والا ویب سائٹ بنانے کا سٹائل ہے یعنی ان پیج سے گیف میں برآمد کرکے ویب پر لگا دو۔ ساری ویب سائٹ تصاویر پر مشتمل ہے۔ ایک چیز جو تصویر میں نہیں تھی وہ رابطے کی معلومات تھیں اور وہ بھی اردو نہیں انگریزی میں تھیں۔ پاکستان کا واحد بندے کا پتر قسم کا رسالہ اور اس کی ویب سائٹ بھی تصویری؟
ہم سے زیادہ باعلم بندے، انٹرنیٹ سے 24 گھنٹے کنکٹ رہنے والے لوگ بھی ایسے کریں تو ہمارا تو اللہ ہی حافظ ہے۔ گلوبل سائنس کے بارے میں مجھے کچھ شبہات سے ہیں کہ ان احباب کو انٹرنیٹ پر کرلپ کی سائٹ کے علاوہ شاید کہیں اردو نظر ہی نہیں آتی۔ پچھلے چار سال میں اردو چیختی چنگھاڑتی پھرتی ہے نیٹ پر لیکن آج تک ان کے کسی بھی شمارے میں اردو کی کسی بھی ویب سائٹ کا تعارف نہیں دیکھ سکا ہوں۔ نہ ہی کبھی اردو بلاگز کا تذکرہ پڑھا اور نہ ہی فورمز کا۔ انھیں تو شاید یہ بھی نہیں پتا کہ اردو یونیکوڈ میں نستعلیق فونٹ بھی دستیاب ہے اب۔ خیر وڈے لوگ ہیں جی۔ وڈے وڈے مسائل ہیں ان کے۔ چھوٹے چھوٹے سے مسائل کی طرف دیکھنے کی فرصت کہاں۔
ورنہ یہ ویب سائٹ بڑے پیار سے ورڈپریس یا اردو جملہ جیسے کسی سی ایم ایس میں بن سکتی تھی جسے اپڈیٹ کرنا بھی بائیں ہاتھ کا کھیل ہوتا ہے۔

اتوار، 28 جون، 2009

مائیکل جیکسن

6 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 7:48 PM ,
مائیکل جیکسن بھری جوانی میں چل بسا۔ مرحوم موسیقی اور "پاپ " موسیقی کا بادشاہ کہلاتا تھا۔ اپنے کیرئیر میں کئی تنازعات کا شکار رہنے والے کی موت کی خبر بھی کئی گھنٹوں تک معمہ بنی رہی۔ خیر فوت ہوگئے گاڈ بلیس ہِم ۔ ہم نے سوچا کہ چونکہ اب فوت ہوہی چکا ہے تو اس کو سن بھی لیا جائے۔ چونکہ یہ ہمارا قومی شعار ہے کہ لیجنڈ کے آنجہانی ہوجانے کے بعد اس کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ اس پر ماتم کرتے اور تقاریب منعقد کرتے ہیں۔ تو ہم نے بھی اس پر عمل کرتے ہوئے آج مائیکل جیکسن کے پچاس کلاسک گانوں کا ایک ٹورنٹ اتارا۔ آپس کی بات ہے یہ وہیں لکھا ہوا تھا کہ کلاسک گانے ہیں تو ہم  نے سوچا ہونگے سو اتار لیے۔ اب ہم ان کو جیٹ آڈیو میں اکٹھا کرکے سن رہے ہیں۔ لیکن بخدا ہمیں ککھ بھی سمجھ نہیں آرہی :-/ زندگی میں انگریزی موسیقی کم ہی سنی ہے جو سنی ہے اس کی سمجھ بھی کم کم ہی آئی ہے۔ البتہ یہ ہے کہ بعض کا ردھم بہت اچھا ہوتا ہے۔ پر یہ میری پیدائش سے بھی پہلے کے گانے انھیں کیا سمجھوں گا۔
تو آپ میری مجبوری سمجھ سکتے ہیں لیکن کیا کریں پکے راگوں کی طرح یہ پچاس گانے تو سننے ہی ہیں تاکہ کوئی کل کو یہ نہ کہہ سکے کہ مائیکل جیکسن کو نہیں سنا بھئی اس نے۔ شریکا بھی تو کوئی چیز ہوتا ہے صاحب۔ ;D

سوموار، 22 جون، 2009

مبارکباد

4 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:27 PM ,
پاکستان جیت گیا۔ اچھا لگا۔ سترہ سال بعد ہم پر خوشی کے لمحات اترے۔ جانے کیسے اترے ورنہ ہر پل یہی دھڑکہ تھا کہ اب گئے تب گئے۔ بالنگ میں پہلے پریشر ڈالنے کے بعد آخری اورز میں اچھا خاصا سکور پڑا جس کے بعد ہم بد دل ہوگئے اور کمپیوٹر بند کرکے سوگئے۔ صبح نو میسج آئے ہوئے تھے سارے رات سوا بارہ بجے کے۔ پاکستان جیت گیا تھا۔ الحمد اللہ کہ پاکستان جیت گیا۔ صبح اٹھ کر دس منٹ میں پوری پاکستانی بیٹنگ کی جھلکیاں دیکھیں اور میچ پورا ہوگیا۔ یوینورسٹی میں لڑکے ڈھول والے کو بلوا کر بھنگڑا ڈالتے رہے۔ ہمارے ڈیپارٹمنٹ کے فوٹو کاپئیر نے سب کو مٹھائی کھلائی۔
اس ساری خوشی کے پیچھے بہت سارے غم اس کو دھنلا کردیتے ہیں۔ اور آہستہ آہستہ غم ہی رہ جاتے ہیں۔ سوات، دیر،، وزیرستان کے حالات اور وہاں کے رہائشیوں کی مشکلات جو گھر بار چھوڑ کر دردر کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں۔ :( اس جشن میں زخمی اور جاں بحق ہونے والے لوگ اور ان کے گھروں میں بپا ہونے والی قیامت۔ سب کچھ اس خوشی کو غم میں بدل دیتا ہے۔ اللہ سائیں ہمیں اس دور ابتلا سے نکالے۔

جمعہ، 19 جون، 2009

گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد

6 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 7:14 AM ,
رنگے برنگے آنچل، ہنستے ہوئے چہرے، چہرے پر دبی دبی سی مسکراہٹیں لیے جوڑے، یہ جی سی یو ایف ہے۔ فیصل آباد کی دوسری پبلک سیکٹر یونیورسٹی۔ یہاں جامعہ زرعیہ فیصل آباد کے بعد سب سے زیادہ داخلے کی درخواستیں آتی ہیں۔

جی سی یو ایف ان جامعات میں سے ہے جنھیں ڈاکٹر عطاء الرحمن کی بدولت کالج سے یونیورسٹی کا درجہ ملا۔ 2001 میں بننے والی یہ جامعہ ابھی تک اپنی تشکیل کے عمل میں لگتی ہے۔ اساتذہ کا انداز فکر، انتظامیہ کے رویے، طلباء کا انداز سب کچھ ایسے لگتا ہے جیسے ابھی بالغ ہوتے ہوتے دس سال اور لے جائے گا۔

جامعہ کے پاس ذرائع کی کمی ہے۔ پچھلے وائس چانسلر صاحب کے جانے کی ایک وجہ بدعنوانی کے الزامات بھی تھے۔ غیر مصدقہ رپورٹس کے مطابق پندرہ کروڑ روپے کا چونا یونیورسٹی کو لگایا جاچکا ہے۔ لیفٹیننٹ ریٹائر خالد محمود نے اس جامعہ کا پرانا طالب علم ہونے کا حق ادا کیا اور جب تک ان کی گورنرشپ رہی جامعہ کو کبھی فنڈز کی کمی نہ پیش آئی۔ بلکہ مشرف دور تک ایچ ای سی ہر جامعہ پر پیسے لٹاتا رہا۔ سیاسی حکومت کے آتے ہی ایچ ای سی خود دیوالیہ ہوگیا اس نے جامعات کو کیا دینا تھا۔ ہمارے زیر تعمیر بلاکس رک گئے اور یونیورسٹی کو خرچہ پورا کرنے کے لیے ایک غیر رسمی سمسٹر شروع کرنا پڑا۔ خیر فنڈز کا کچھ مسئلہ تو گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے آنے سے حل ہوا ہے اور اب تعمیر کے رکے ہوئے کام پر سے جاری ہیں۔ لیکن جامعہ کے مالی حالات اب بھی دگرگوں ہیں۔

اورسونے پر سہاگہ: آپ کی جامعہ میں اخلاقی اور مذہبی حدود کو پامال کیا جارہا ہے۔ آپ کو وارننگ دی جاتی ہے اس کو کنٹرول کریں۔ منجانب طالبان پنجاب۔


کوئی دو ماہ پہلے یہ خط وی سی کو ارسال کیا گیا اور تب سے جامعہ کی سیکیورٹی انتظامیہ کی دوڑیں لگی ہوئی ہیں۔ جامعہ کے چھ گیٹس ہیں جن میں سے چار فوری طور پر بند کروا دئیے گئے۔ گیٹ نمبر ایک پیدل کے لیے اور نمبر دو گاڑیوں کے لیے مخصوص کردیا گیا۔ پارکنگ عمارات کے ساتھ سے ختم کردی گئی۔ طلباء جن کے جامعہ کے کارڈ ابھی تک نہیں بنے تھے انھیں عارضی کارڈز بنا کر دئیے گئے۔ بقول ہمارے وی سی ہمیں تین قسم کی کرپشن کا سامنا ہے۔ اخلاقی، مالی اور تدریسی۔ اس سارے کا نتیجہ یہ کہ ہم پر اخلاقیات ٹھونسی جارہی ہیں۔ طلباء کلاسز کے بعد ایک گھنٹے سے زیادہ بیٹھ نہیں سکتے۔ جہاں کہیں کوئی جوڑا بیٹھا ہوگا اس کو سیکیورٹی کے جوان یا ڈسپلن کمیٹی کے ممبر اساتذہ رپورٹ کریں گے۔
میں جامعہ کا طالب علم ہوں۔ بطور طالب علم اس ساری صورت حال میں بہت ان ایزی محسوس ہوتا ہے۔ آپ اپنے ساتھیوں کے ساتھ کہیں بیٹھ نہیں سکتے۔ لائبریریز ہماری الا ماشاءاللہ ہیں کہ دو میز ہیں اور اٹھارہ کلاسز ہیں تو وہاں کیا بیٹھیں۔ ہمارے پاس کمروں کی کمی ہے چناچہ بی اے آنرز کی کلاسیں ماسٹرز کی کلاسوں کے ساتھ ملا کر پڑھائی جاتی ہیں۔ صبح نو سے دوپہر تین تین بجے تک انھیں صرف چار کلاسیں پڑھنے کے لیے رکنا پڑتا ہے۔ ایسی صورت میں ان سے یہ مطالبہ کہ لان میں نہ بیٹھو، کاریڈور میں نہ بیٹھو اور مکسنگ نہ کرو۔۔۔۔۔ طلباء چکی کے دو پاٹوں میں آئے ہوئے ہیں جیسے۔
پتا نہیں شاید یہی اخلاقیات ہے کہ لڑکا لڑکی ساتھ نہ بیٹھیں چاہے وہ ہم جماعت ہی کیوں نہ ہوں، یا وہ ایک دوسرے سے ہنس کر بات نہ کریں، یہ ایک دوسرے کے ساتھ آتے جاتے نظر نہ آئیں۔ شاید یہی اخلاقیات ہیں لیکن بطور طلباء ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ اگر ایسا ہونا روک بھی دیا جائے تب بھی ایسی "گنجائشیں" ختم نہیں ہوجاتیں۔ ساتھ بیٹھنے پر پابندی کے باوجود لوگ ساتھ بیٹھتے ہیں اور گھنٹوں بیٹھتے ہیں۔ لوگ لائبریری میں بیٹھ کر دل پشوری کرلیتے ہیں۔ اور بدنام پوری کمیونٹی ہورہی ہے۔ ہم کلاس روم سے متعلقہ گفتگو بھی ساتھ بیٹھ کر نہیں کرسکتے۔ عجیب حالات ہیں آج کل۔
میرے خیالات اس موضوع پر بڑے کنفیوژ سے ہیں۔ سمجھ نہیں آرہی تھی کہاں سے شروع کروں اور کہاں پر ختم کروں۔ لیکن یہ حقیقت ہے کہ آج کل بطور طلباء ہم اچھی خاصی ٹینشن میں ہیں۔ ہماری جامعہ کے مالی اور انتظامی حالات، اب سیکیورٹی حالات ان سب نے مل کر ایسا تاثر پیدا کردیا ہے کہ ہم کسی سکول کے طلباء ہیں جامعہ کے نہیں۔ ہماری جامعہ میں انتظامی رسہ کشی، عہدوں پر اجارہ داریاں، سفارشیں، ناجائز اور ڈھٹائی کی حد تک پہنچی ہوئی تقرریاں (ایم اے پاس ٹیچر رئیس شعبہ ہیں اور ان کے نیچے تین پی ایچ ڈی ہیں۔ خود سوچ لیں کہ کون حقدار ہے ڈاکٹر یا ایم اے؟ یہ ایک مثال ہے صرف)، پاکستان کی طرح کے غریب حالات، شعبہ جات کے مابین رسہ کشی، وسائل کی عدم دستیابی۔۔۔ اس سب نے مل کر عجیب سماں باندھ رکھا ہے۔ اور ہم اس سماں میں بیٹھ کر پڑھتے ہیں، دبی دبی سی ہنسی بھی ہنس لیتے ہیں، چوری چوری کنٹین پر بھی چلے جاتے ہیں، سیکیورٹی والوں کے ڈر کے باوجود کہیں بیٹھ کر اکٹھے کھانا بھی کھا لیتے ہیں اور پڑھائی پر گفتگو بھی ہوجاتی ہے۔ لیکن ڈرتے ڈرتے۔۔۔۔۔۔

سوموار، 15 جون، 2009

حساب برابر

3 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 7:11 AM ,
سپریم کوڑت کے حکم پر پٹرولیم مصنوعات کی قیمت میں ہونے والی کمی کس خوبصورتی سے واپس لی گئی ہے۔ سبحان اللہ اس فنکاری پر۔
اسلام آباد۔ وزیر اعظم کے مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ کاربن سر چارج کی مد سے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو 1کھرب34 ارب روپے کے محصو لات حاصل ہونے کی توقع ہے ۔ یہاں پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پی ڈی ایل کی جگہ ماحول دوست پالیسی کو فروغ دیتے ہوئے پٹرولیم مصنوعات پر 3سے 14روپے فی لیٹر کا ربن سر چارج لگایا گیا ہے ۔ کاربن سرچارج کی مد میں ھائی سپیڈ ڈیزل آئل پر 8روپے فی لیٹر ، موٹر سپرٹ پر 10 روپے فی لیٹر ، ایس کے ایس او پر 6 روپے فی لیٹر ، لائٹ ڈیزل پر 3 روپے ، ایچ او بی سی پر 14 روپے اور سی این جی پر 6 روپے فی لیٹر کے حساب سے وصول کیا جائے گا

اتوار، 14 جون، 2009

بجٹ بیتیاں

2 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 6:53 PM ,
لو جی بجٹ تشریف لاچکا ہے۔ سنا ہے ٹیکس فری ہے۔ لیکن حقیقت آپ میں سب ہی جانتے ہیں کہ ٹیکس فری کہاں تک ہے اور ٹیکس کہاں سے شروع ہوتا ہے۔ دوسروں کی کیا کہیے صاحب ہمیں تو اپنا اتنا پتا ہے کہ پہلے یوفون کے 500 ایس ایم ایس والے پیکج سے مہینہ گزر جاتا تھا۔ اب اس پر فی میسج 20 پیسے ایس ایم ایس سے یہ رقم ساٹھ سے ایک سو ساٹھ ہوجائے گی۔ سادہ میسج آن نیٹ ستر پیسے کے قریب کا تھا جو اب نوے کا ہوجائے گا اور آف نیٹ سوا روپے کے قریب کا تھا اب ڈیڑھ کا ہوجائے گا۔ ہاں اس سے اتنا فائدہ ہوگا کہ یار لوگ کھانسی کی اطلاع بھی میسج پر دینے لگے تھے اس سے باز آجائیں گے۔
آپ کا کیا خیال ہے؟

ہفتہ، 13 جون، 2009

اردو لسانیات

4 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 11:39 AM ,
آج کل ہم اردو کے بارے میں بڑی سنجیدگی سے غور و فکر فرما رہے ہیں۔ اگرچہ اپنا تھیسز ہم انگریزی پر ہی کریں گے لیکن اردو پر اس کے علاوہ تحقیق کا ارادہ ہے۔ لسانیات میں ہمارا میدان کارپس ہے۔ ڈیٹا کو ٹیکسٹ فائلوں میں اکٹھا کرو اور اس کے بعد اس پر جو چاہے عمل کاری کرو۔
اردو کے سلسلے میں وسائل ابھی بہت محدود ہیں۔ ہمارے پاس اردو کا کوئی مناسب کارپس ہی موجود نہیں۔ کرلپ والے ایک کارپس مہیا کررہے ہیں جو شاید بیس ہزار الفاظ کے قریب ہے۔ لیکن یہ کارپس انگریزی سے ترجمہ کیا ہوا لگتا ہے۔ انگریزی اردو نیبالی متوازی کارپس منصوبے کا حصہ یہ کارپس ہمارے ذاتی خیال میں اردو کے اہل زبان سے حاصل کردہ ڈیٹا کا مقابلہ نہیں کرسکتا۔ اس کے مترجمین دس بارہ بھی ہوں تو بھی اردو کے فورمز یا بلاگز سے ڈیٹا حاصل کرنے کی صورت میں ہمارے پاس بہت زیادہ ورائٹی ہوگی۔ پچاس یا اس سے بھی زیادہ کی آبادی سے ڈیٹا حاصل کرنے سے بہت سی ایسی چیزیں سامنے آئیں گی جو اس کارپس پر تحقیق سے نہیں آسکتیں۔ مثلًا ہم انگریزی الفاظ کا بالکل بھی خیال نہیں رکھتے۔ اور اردو کے ساتھ انجانے میں رج کے کھلواڑ کرتے ہیں۔ اس سب کو سٹڈی کرنا بڑا دلچسپ کام ہے۔
کارپس کا مطلب یہ نہیں کہ ہم ٹیکسٹ اکٹھا کرکے رکھ لیں۔ اس کے بعد ہمیں اس کو کچھ مزید مراحل سے بھی گزارنا پڑتا ہے۔ اس کو اینوٹیشن Annotation کہا جاتا ہے۔ یعنی ہم کارپس کو مختلف انداز سے ٹیگ کرتے ہیں۔ جیسے ایچ ٹی ایم ایل کے ٹیگز ہوتے ہیں۔ اردو کا ٹیگ شدہ کارپس آپ کرلپ کی ویب سائٹ پر دیکھ سکتے ہیں۔ یہ گرامر کے لحاظ سے ٹیگ شدہ ہے جس میں ہر لفظ کے ساتھ لگا ٹیگ یہ بتاتا ہے کہ اس کا گرامر کے لحاظ سے کونسا زمرہ ہے، اسم، فعل، حرف جار وغیرہ وغیرہ۔
کرلپ کا کا کارپس ہاتھ سے ٹیگ شدہ ہے۔ جسے دو ماہرین لسانیات نے گھنٹوں کی محنت سے ٹیگ کیا۔ یہ طریقہ کار محدود مقاصد کے لیے تو بہترین ہے اور اس میں درستگی کی شرح بھی سو فیصد ہے لیکن ہر بار یہی کام کرنا بہت دشوار ہے۔ یہ بہت زیادہ وقت طلب کام ہے۔ میں اگر ایک لاکھ الفاظ کا کارپس بنانے کی سوچ رہا ہوں تو اس کو ٹیگ کرنا بہت بڑا مسئلہ ہوجائے گا جبکہ میرے پاس وقت کی بھی کمی ہے اور مالی وسائل کی بھی کہ دوسروں کو معاوضے پر اس کام کے لیے مہیا کرسکوں۔ ایسی صورت میں ہم مشین ٹیگنگ کی بات کرتے ہیں۔ انگریزی اور دنیا کی دوسری زبانوں میں اس سلسلے میں بہت ترقی کی ہے۔ انگریزی کے لیے ہمارے پاس درجن بھر ٹیگرز دستیاب ہیں۔ جبکہ اردو کے لیے ابھی تک صرف ایک ٹیگر دستیاب ہے۔ اس ٹیگر کی صلاحیت بھی محدود ہے۔ دس ہزار الفاظ کے ایک کارپس پر اسے ٹیسٹ کیا گیا جہاں اس نے ستانوے فیصد درستگی دکھائی۔ یہ کرلپ کے ہی ایک طالب علم کا ایم ایس کا پروجیکٹ تھا۔ 2007 میں مکمل ہونے والا یہ سافٹویر مزید اپڈیٹ نہیں کیا گیا۔ اس کارپس کو مزید ڈیٹا پر ٹریننگ کی ضرورت ہے اور اس کی ڈیٹابیس کو مزید بڑا کرنے کی ضرورت ہے تاکہ یہ عمومی مقاصد تحقیق کے لیے بھی کارآمد ثابت ہوسکے۔
اس سلسلے میں ہمیں مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ اردو ڈیٹا کی کلیکشن، اس کے ذریعے اردو ٹیگر کو ٹریننگ دینا۔ اس کی خامیاں اور نقائص دور کرنا وغیرہ۔ بہت سارے کام ہیں جو میں اکیلا نہیں کرسکتا۔ وقت کی کمی اور میری پروگرامنگ صلاحیتوں کا محدود ہونا اس کی بڑی وجہ ہیں۔
متعلقہ روابط اوپر تحریر میں موجود ہیں۔ احباب اگر اس سلسلے میں کوئی مدد کرسکتے ہوں تو کیا ہی بات ہے۔ اس سلسلے میں ڈیٹا کیلکشن کی ذمہ دار میں لے سکتا ہوں۔ اردو فورمز، بلاگز، نیوز سائٹس اور اخبارات کی ویب سائٹس سے ڈیٹا اکٹھا کرکے اس کی کانٹ چھانٹ کرنا میرا کام ہے۔ لیکن اس کے بعد ٹیگر کے پروگرامنگ مسائل کے حل کے لیے مجھے راجہ نعیم اور محترم نبیل حسن نقوی جیسے احباب کا تعاون درکار ہوگا۔ اس پروگرام کے سورس کوڈ کے لیے بھی ڈاکٹر سرمد سے درخواست کروں گا امید ہے وہ مہیا کردیں گے۔ اگر اس کو ڈویلپ کرنے والے صاحب سے رابطہ ہوجائے تو موج ہی ہوجائے۔

سوموار، 1 جون، 2009

تیرا ککھ نہ رہوے

7 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 10:04 PM ,
اردو محفل پر جنرل موٹرز کے دیوالیہ کی خبر تھی۔ ایک دوست نے وہاں بدعا دی ہوئی تھی اللہ کرے جنرل موٹر دیوالیہ ہو ہی جائے۔
یہ اور ایسی اور جنرل سی بددعائیں دینا آج کل پاکستانیوں کا شیوہ ہے۔ بدعائیں چلتے پھرے، بددعائیں اٹھتے بیٹھتے اور بددعائیں نماز کے بعد۔ مولا یہ کردے مولا وہ کردے مولا ان کا ککھ نہ رہے۔
اتنی ساری بدعاؤں کے بعد مجھے لگنے لگا ہے کہ ہم مرد نہیں زنخے ہوچلے ہیں یا ہوگئے ہیں۔ جو ہر بات پر تالی بجا کر اور کولہے مٹکا کر اتنا ہی کہہ سکتے ہیں۔
وے تہاڈا ککھ نہ رہوے۔ ٹُٹ پینیوں۔۔گھر ماں بہن نہیں اے