بدھ، 1 مئی، 2013

سماجی شناخت اور فکری قحط سالی

ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 1:40 PM ,
قوم افراد سے مل کر بنتی ہے۔ قوم دیوار ہے تو افراد اس کی اینٹیں۔ لیکن یہ اینٹیں اکیلی ہی دیوار نہیں بناتیں۔ صرف اینٹیں کھڑی کرو تو دیوار ایک حد کے بعد کھڑی رہنے کے قابل نہیں رہے گی۔ اینٹوں کو جوڑنے کے لیے سیمنٹ درکار ہوتا ہے۔ اور قوم نامی دیوار کو مضبوط کرنے والے سیمنٹ کا نام مشترکہ اقدار ہیں، مشترکہ سوچ اور ایک ہونے کا احساس۔ افراد میں اگر یہ احساس مفقود ہو جائے، ماند پڑنے لگے تو اس کے نتیجے میں قوم نامی دیوار اینٹوں کی گھوڑی کی شکل اختیار کر لیتی ہے۔ راج مستریوں کی اصطلاح میں گھوڑی اینٹوں کا ایک ایسا مجموعہ ہوتی ہے جو سراسر  عارضی مقصد کے لیے ایک جگہ اوپر نیچے لگا دی جاتی ہیں بغیر کسی سیمنٹ یا جڑنے والے مادے کے، اکثر گارے کے بھی بغیر۔ افراد میں اقدار مشترک نہ رہیں تو وہ قوم کے اندر اینٹوں کی گھوڑیاں بن جاتے ہیں۔ ایک یہاں لگی ہے دوسری وہاں لگی ہے، اور ان گھوڑیوں کا کوئی مقصد مشترک نہیں ہوتا۔ ہر ایک کا اپنا ایجنڈا بن جاتا ہے، لیکن یہ ایجنڈے عارضی، نا پائیدار اور عدم استحکام پیدا کرنے والے ہوتے ہیں۔ افراد کے یہ گروہ نہ صرف قوم کو کمزور کرتے ہیں بلکہ خود کو بھی تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑتے۔ اسی لیے افراد میں قدرِ مشترک کا احساس پایا جانا انتہائی ضروری ہوتا ہے۔

قدرِ مشترک کئی چیزوں کے اشتراک کا نام ہے۔ اس میں سیاسی، سماجی، لسانی، مذہبی، علاقائی، قبائلی، رنگ و نسل سے لے کر زمانے تک کے متغیر آ سماتے ہیں۔ انہیں میں کچھ متغیر تنوع بھی تشکیل دیتے ہیں لیکن متغیرات کی ایک اکثریت یکجہتی تشکیل دیتی ہے۔ جس کے تحت قوم آپس میں جڑی رہتی ہے۔ قدرِ مشترک کو ایک اور نام دیں تو سماجیات کی اصطلاح "سماجی شناخت" استعمال کی جا سکتی ہے۔ سماجی شناخت ایک تکنیکی اصطلاح ہے، لیکن یہاں ہم اوپر بیان کیے گئے تمام متغیرات میں سے ایک، کچھ یا تمام پر مشتمل احساسِ خودی اور پھر احساسِ یکجہتی کو سماجی شناخت کا نام دے سکتے ہیں۔ سماجیاتی تحقیق بتاتی ہے کہ سماجی شناخت کوئی لوہا پتھر نہیں، بلکہ یہ مائع جیسی کوئی چیز ہے جو شکلیں بدلتی رہتی ہے۔ سماجی شناخت کسی ایک متغیر پر مشتمل نہیں ہوتی، یہ کئی متغیرات کا مجموعہ ہو سکتی ہے، یہ مختلف مواقع پر مختلف متغیرات کو اپنا سکتی ہے۔ ذاتی طور پر میں نے جو کچھ پڑھا، دیکھا، سنا اور محسوس کیا، مجھے جو سمجھ آئی وہ یہ ہے کہ سماجی شناخت کئی متغیرات کا مجموعہ ہوتی ہے۔ جس میں اوپر بیان کردہ تقریباً تمام تر چیزیں آ جاتی ہیں۔ اور یہ متغیرات مختلف مواقع پر، مختلف سیاق و سباق میں، ہماری روز مردہ زندگی کے ہر مقام، جگہ، وقت کے حوالے سے اوپر نیچے ہوتے رہتے ہیں۔ مثلاً میں ایک جگہ بیٹا ہوں، ایک جگہ استاد ہوں، ایک جگہ فری لانس مترجم ہوں، ایک جگہ بلاگر ہوں، ایک جگہ مسلمان ہوں، ایک جگہ پنجابی ہوں، ایک جگہ پاکستانی ہوں، ایک جگہ پڑھا لکھا نوجوان ہوں، ایک جگہ مریض۔۔۔۔۔وغیرہ وغیرہ۔ اپنے روز مرہ میں مَیں کئی چہرے اپناتا ہوں، اپنی سماجی شناخت تشکیل دیتا ہوں۔ کبھی کوئی متغیر سامنے رکھتا ہوں کبھی کوئی، لیکن ان سب کے علاوہ میری ایک نسبتاً مستقل سماجی شناخت ہے، میری خودی، میری انا، جو میری یعنی محمد شاکر عزیز کی شخصیت وضع کرتی ہے، میری نظروں میں بھی اور میرے جاننے والوں، پڑھنے والوں کی نظر میں بھی۔

اتنی تمہید باندھنے کا مقصد یہ تھا کہ اس ساری سماجی شناخت کے باوجود میں شناخت کے بحران کا شکار ہوں۔ جیسے اس قوم کا قریباً ہر فرد تذبذب میں مبتلا ہے کہ کدھر جائے، کیا کرے۔ کچھ متذبذب ہیں اور کچھ نے ایک شناخت کو اتنی شدت سے تھام لیا ہے کہ چاہے انگلیوں سے خون رسنے لگے، وہ اسے چھوڑنا نہیں چاہتے۔ اور اس شناخت کو خود پر اتنا طاری کرتے ہیں کہ وہ دوسرے متغیرات سے مکمل طور پر انکار کر دیتے ہیں۔ جیسا کہ میں نے عرض کیا شناخت کسی ایک سماجی متغیر کا نام نہیں، سماج میں موجود بے شمار متغیرات مل کر آپ کی شخصیت تشکیل دیتے ہیں۔ یہ کم ہوں یا زیادہ وہ الگ بات ہے لیکن کثیر متغیرات موجود ضرور ہوتے ہیں، جب کوئی شخص یا اشخاص کسی ایک متغیر کو خود پر ایک حد سے زیادہ طاری کر لیتا/ لیتے ہیں تو جو چیز سامنے آتی ہے اسے میں انتہا پسندی، فکری قحط سالی اور اپنی سماجی شناخت کے ایک حصے کا قتلِ عام گردانتا ہوں۔

اجتماعی سطح پر دیکھوں تو میرے سامنے دو قسم کے لوگ ہیں۔ ایک جو متذبذب ہیں، جو کوئی ایک سماجی شناخت اپنانے/ اس کا اقرار کرنے سے گریزاں ہیں، یا ڈرتے ہیں اور اسی ڈر میں دوسری سماجی شناخت اوڑھے رہتے ہیں، دوسری جانب وہ ہیں جو اتنے سخت دل ہو چکے ہیں کہ اپنے شخصی تنوع کو قبول نہیں کرتے اور خود کو ایک خول میں بند کر لیتے ہیں۔ قرآن کہتا ہے" اللہ نے تمہارے قبیلے بنا دئیے تاکہ تم پہچانے جاؤ" (مفہوم)۔ نبی ﷺ کا فرمان ہے کہ کسی گورے کو کالے پر، عربی کو عجمی پر۔۔۔الخ کوئی فوقیت حاصل نہیں۔ قرآن قبیلے کا ذکر کیوں کرتا ہے؟ قرآن ایک سماجی شناخت کا ذکر کرتا ہے کہ ہاں تنوع رکھا گیا ہے، لیکن ساتھ ہی نبی ﷺ کی زبان سے کہلوا بھی دیا گیا کہ خبردار خود کو افضل نہ سمجھ بیٹھنا۔

میں ایک پاکستانی ہوں، ایک مسلمان ہوں، میں ایک خاص جغرافیائی خطے کا رہائشی بھی ہوں، میں ایک خاص زبان بھی بولتا ہوں، میں ایک خاص پیشے سے منسلک بھی ہوں۔ اس کا مطلب ہے کہ یہ سارے متغیرات، یہ ساری شناختیں میری تعریف کرتی ہیں، میری شخصیت کو سماج میں تعمیر کرتی ہیں۔ مجھے وہ بناتی ہیں جو میں ہوں۔ لیکن بدقسمتی سے یہ سوچ ہر ایک کی نہیں ہے۔ اس ملک کی اساس اسلام قرار دی جاتی ہے۔ میں بڑے بڑے مدلل مضامین پڑھتا ہوں جن میں نظریہ پاکستان کو لاحق خطرات کی نشاندہی کی گئی ہوتی ہے، پاکستان کی "نظریاتی بنیادیں" کھودنے والوں پر لعنت کی گئی ہوتی ہے۔ تو میں حیران ہوتا ہوں کہ یہ فکری بحران، فکری قحط سالی کیوں؟ ایک ہی شناخت کو خود پر اوڑھ لینے کا عمل کیوں؟ انتہا پسندی کیوں؟

نظریہ پاکستان ٹرسٹ لاہور والے بڑے عظیم لوگ ہیں، نوائے وقت کے تربیت یافتہ ، پاکستان کے رکھوالے اور پھر اسلام کے رکھوالے، یہ پاکستان کو 712 ء سے تخلیق شدہ بتاتے ہیں جب محمد بن قاسم نے دیبل پر حملہ کیا۔  ایسا کرتے ہوئے یہ لوگ باقی سارے متغیرات نظر انداز کر جاتے ہیں۔ یہ لوگ بھول جاتے ہیں کہ اسلام کے علاوہ بھی کچھ چیزیں ہیں جو انہیں، مجھے اس قوم  کو شناخت عطاء کرتی ہیں۔ زبان، رنگ، نسل، جغرافیہ، پیشہ ،پانچ ہزار سالہ تاریخ اور آج کا زمانہ کچھ متغیرات ہیں جو مذہب کے علاوہ ہماری شناخت میں حصہ ڈالتے ہیں۔ لیکن ان سب کو نظر انداز کر کے صرف مذہب کیوں؟ مذہب کو اپنانا افضل ہو گا، نبی ﷺ کے ساتھ خود کو موسوم کرنے سے بڑی بات بھلا دنیا میں کوئی ہو سکتی ہے؟ لیکن  پھر قرآن قبیلوں کا ذکر کیوں کرتا ہے؟ اللہ نے رنگ اور نسل کیوں الگ الگ رکھ دئیے؟ اتنا تنوع کیوں ہے؟ ہم عرب میں ہی کیوں نہ پیدا ہو گئے؟ کیا یہ اس لیے ہے کہ اسے نظر انداز کر دیا جائے؟ عمومی مذہبی نقطہ نظر سے دیکھیں تو یہ عین حق لگتا ہے۔ آخر اسلام دنیا کا آخری دین، اس کے بعد کسی چیز کی ضرورت بھی نہیں  رہنی چاہیئے۔

لیکن پھر بار بار اس یقین کا انکار کیوں ہوتا ہے؟ 1947 میں پاکستان ( جو نظریہ پاکستان ٹرسٹ کے مطابق دو قومی نظریے کی بنیاد پر وجود میں آیا) کے بعد برصغیر میں کیا صرف مذہب  سماجی شناخت تشکیل دینے والا اکلوتا فیکٹر رہا ہے؟  کس کس کی مثال دوں؟ سقوطِ ڈھاکہ گنواؤں؟  جغرافیے کے نام پر بلوچوں کی بغاوت یاد کرواؤں؟ کراچی میں مہاجر نامی قومیت کی تشکیل کا ذکر کروں؟ پختون ، پنجابی ، سندھی کی اصطلاحات پیش کروں؟ کون کونسی مثال دوں جس سے یہ بات واضح ہو جائے کہ صرف مذہب سماجی شناخت تشکیل نہیں دیتا۔  عطاء اللہ شاہ بخاری اور ابو الکلام آزاد کے خطبات تحاریر گنواؤں؟  یا اسلام کا  مقصدِ دعوت  بیان کروں جس میں انسانیت اولین ہے، ساری دنیا اسلام کے لیے امتِ دعوت ہے۔ اسلام  دعوتِ دین کے لیے مذہب سے ماوراء ہو جاتا ہے، اسلام ایک انسان کے قتل کو انسانیت کا قتل قرار دیتا ہے مسلمانیت کا قتل نہیں۔ اسلام دین میں جبر کا قائل نہیں۔ کیا کیا دلیل پیش کروں؟

ایک طرف یہ کم شدت والے مذہبی چادر اوڑھنے والے ہیں۔ دوسری طرف وہ  بندوق بردار ہیں جو اپنی ہزار سالہ تاریخ کا انکار کر کے صرف ایک  چیز کو خود پر طاری کر چکے ہیں۔ خود کو مسلمان قرار دیتے ہیں اور اس میں اس حد تک چلے جاتے ہیں کہ پیغمبرِ اسلام ﷺ کی تعلیمات  کو بھلا بیٹھتے ہیں۔ وہ نبی ﷺ جو جنگ میں ناحق درخت بھی کاٹنے سے منع کرے اس کے نام لیوا بے گناہ سروں کی فصلیں کاٹ  کر اس پر ذرا برابر شرم بھی محسوس نہیں کرتے۔

مجھے آج کہنے دیں کہ اس ملک میں فکری انحطاط یہی نہیں، فکری قحط سالی ادھر ہی نہیں اس کا ایک دوسرا رخ بھی ہے جو مذہب کو زندگیوں سے نکال چکا ہے، اور اب صرف انسان کہلوانا چاہتا ہے۔ ان کے خیال میں "انسان" کی سماجی شناخت انہیں زیادہ غیر جانبدار بنا کر پیش کرتی ہے۔ حالانکہ وہ  بھی ایک حقیقت سے انکار کے مرتکب ہو رہے ہیں۔ مذہب انہیں ڈیفائن کرتا ہے، جیسے ان کے اجداد کو ڈیفائن کرتا تھا۔ مذہب ان کے خون میں بہتا ہے وہ مانیں یہ نا مانیں۔ ان کے نام، رہن سہن کے طور طریقے مذہب سے متاثر ہیں۔ وہ مصنوعیت جتنی مرضی طاری کر لیں لیکن وہ متغیر ، مذہب نامی متغیر ان کی سماجی شناخت کا اہم جزو تھا، ہے اور رہے گا۔  لیکن اس سے جب انکار کیا جاتا ہے تو نتیجہ ایک اور قسم کے فکری بحران کی شکل میں نکلتا ہے۔ ایک ایسا خلاء جسے پورا کرنے کے لیے وہ ٹامک ٹوئیاں مارتے ہیں، کبھی ادھر سے اینٹ اٹھائی کبھی ادھر سے پتھرا ٹھایا اور عجیب الخلقت چیز تشکیل دے لیتے ہیں، چیز یعنی اپنی سماجی شخصیت۔ جس پر غصہ، ترس یا ہنسی  آتی ہے۔

لیکن اس کے ساتھ  ڈر بھی آتا ہے۔ اس قوم کے فکری بحران سے ڈر لگتا ہے۔ شاکر ، اور شاکر جیسے بے شمار افراد اس قوم کی  کمزور ہوتی دیوار، گھوڑیاں بنتی دیوار سے تعلق کمزور کرتے چلے جاتے ہیں۔ ان کا آپس کا بانڈ  غائب ہوتا چلا جاتا ہے۔ وہ ایک قدر کو اختیار کر کے دوسری سے انکار کرتے ہیں۔ کبھی مذہب سے، کبھی جغرافیے سے، کبھی رنگ سے، کبھی نسل سے، کبھی زبان سے۔ کوئی مہاجر ہوا جاتا ہے، کوئی پنجابی، کوئی پختون ہوا جاتا ہے، کوئی مسلمان، کوئی پاکستانی ہوا جاتا  ہے، کوئی سیکولر، کوئی انسانیت نواز، کوئی لبرل۔ کوئی مشرق کو رخ کیے ، کوئی مغرب کو ، کوئی شمال کو اور کوئی شمال مغرب کو ۔ ایک دوسرے کی جانب پشت کیے بیٹھے یہ افراد، جن کے مابین اکثریتی اشتراکی اقدار کی قحط سالی طویل ہوتی چلی جاتی ہے، شدت اختیار کرتی چلی جاتی ہے۔ اور شاکر ڈرتا ہے اس وقت  سے۔ جب  اینٹوں کی یہ گھوڑیاں جو ابھی الگ الگ کھڑی ہیں، گر پڑیں اپنے وجود کھو بیٹھیں اور ساتھ اس کے قوم کا وجود بھی نابود کر ڈالیں۔ بہت ڈر لگتا ہے اس وقت سے سائیں۔ اللہ اس وقت سے بچائے۔ رب سائیں اس وقت سے بچائے۔

وما  علینا الا البلاغ

Back Top

8 تبصرے:

  1. جب اسلام دنیا میں آیا اور پھیلا تو شروع دور میں بھی لوگ مہاجر تھے۔ نصارٰی تھے۔ شامی مصری ایرانی اور دیگر بہت سے علاقوں اور ممالک کی وجہ سے انکی بہت سی شناختیں تھیں ۔ مگر ان میں ایک قدر انتائی مشترک تھی۔ اور وہ تھی اسلام ۔ اسلام نے انھیں ایک لڑی میں پرو دیا تھا۔ اور وہ ایک بہت بڑی شناخت سے پہچانے گئے اور مسلمان کہلوائے۔ الغرض یہ موضوع نیا نہیں ہے۔ جیسے آپ بھی تسلیم کرتے ہیں کہ قوموں کے زیلی گروہوں یعنی قبیلوں کے بارے قرآن کریم میں بھی اللہ تعالٰی کا ارشاد ہے۔ یعنی مختلف قبائل ۔ اور عربی عجمی جیسی شناختیں تھیں مگر دین نے انھیں ایک لری پیں پرو دیا جس کی برکت سے انھوں نے ساری دنیا مین عزت پائی اور تاریخ میں نام محفوط کیا۔
    پاکستان جب نہیں تھا تو تب بھی پبجابی بلوچی سندھی پٹھان اور پاکستان کی دیگر نسلیں اور قومیں موجود تھیں ۔ جن میں ہر دو طرح کے لوگ پائے جاتے تھے ۔ یعنی بنیادی طور پہ مسلمان اور ہندؤ۔ اور سکھ وغیرہ۔ مسلم اور غیر مسلم ۔ ورنہ تمدنی زندگی ۔ رہن سہن اور زبان وغیرہ ایک طرح کی تھیں لیکن یہ ایک ہی نسل ۔ اور علاقائی شناخت سے ہوتے ہوئے آپس میں جدا تھے ۔ ایک ہی وقت میں الگ الگ دائروں میں سفر کرتے ہوئے۔ اور ہزار سال سے زیادہ گزرنے کے باوجود یہ ایک ہی نسل خطے زبان اور قوم کے ہونے کے باوجود انکے تہوار جدا تھے۔ خاندان الگ تھے ۔ حتٰی کہ مرنا جینا کھانا پینا الگ الگ تھا۔ ایک مذھب کے لوگ اگر دوسرے مذھب کے چونتے چاکے سے گزر جاتے تو دوسرے مذھب کے لوگ اپنے چونرت چاکے کو پلید سمجھتے تھے اور گائے کے گوبر سے اسے اپنی دانست میں پوتر کرتے تھے۔
    یعنی مذھب ایک اسی حد فاصل تھی کہ جسے اسکے ماننے والے ہزار سال سے زیادہ ساتھ ساتھ رہنے اور مذھب کے علاوہ ہر قدر مشترک ہونے کے باوجود یہ اکھٹے نہ ہوسکے آپس میں ایک نہ ہو سکے تو ثابٹ یہ ہوا ۔ کہ دنیا بھر میں اور برصغیر میں مذھب ایک ایسا جز ہے جو سارے کُل پہ بھاری ہے تو پھر آپ بھی تسلیم کر لیں کہ ایک نظریہ یعنی ایک الگ قوم کا نظریہ۔ برصغیر پاک و ہند میں ہمشہ موجود رہا ہے۔ جس کی بنیاد پہ پاکستان وجود میں آیا ہے
    قدر مشترک جو بلوچوں ۔ پنجابیوں ۔ پٹھانوں۔ سندھیوں اور پاکستان کی دیگر قومیتوں اور نسلوں ۔ میں اسلام ہی وہ پہلی قدر مشترکہ ہے جو سب کو ایک لڑی میں پرو دیتی ہے۔ باوجود اپنی علاقائی و صوبائی یا لسانی شناختوں سمیت ایک وقت آئے گا اگر کوشش کی جائے تو یہ مکمل قوم بن سکتی ہے۔ اور اپنے مسائل حل کر سکتی ہے۔ مگر شرط یہ ہے کہ اس کے لئیے ابن الوقت لوگوں کی بجائے مخلص لوگوں کو کام کرنے کا موقع دیا جائے ۔ اور ہم اپنی نسلی۔ قبائلی ۔ علاقائی ۔ لسانی شناخت کو چھوڑے بغیر ایک عطیم قوم بن سکتے ہیں۔ اور خدا نخواستہ اگر بد نصیبی سے کسی وجہ سے ہم ایسا کرنے میں ناکام رہتے ہیں اور ہم اپنی بشری کمزوریوں کی وجہ سے کامیاب نہیں ہو پاتے تو اسمیں نطریہ کا کوئی قصور نہیں ۔ یہ ہمارا اپنا قصور ہوگا

  2. مزے کی بات یہ ہے کہ دو قومی نظریے کے مطابق برصغیر کو جغرافیائی بنیادوں پر تقسیم نہیں ہونا چاہیئے تھا۔ اگر ہوتا تو سارے مسلمان ایک طرف، ہندو ایک طرف، سکھ ایک طرف، عیسائی ایک طرف، پارسی ایک طرف ہوتے۔ لیکن ہوا کیا؟ جغرافیے کی بنیاد پر تقسیم کر کے پیچھے بچے مسلمانوں کو بے یار و مددگار چھوڑ دیا گیا ایک "کافر" ملک میں۔
    ویسے تو کانگریسی مسلمان رہنماؤں کا ایک آرگیومنٹ ہے لیکن یہاں فٹ بیٹھ رہا تھا۔

  3. یار لوگوں کو کرنے کو کچھ ملتا نہیں تو الٹا پاکستان اور نظریہ پاکستان پہ تنقید کرنے لگ جاتے ہیں۔

    لگے رہو بادشاہو۔

  4. آپ کی ساری پریشانی کی وجہ نہ دین اسلام ہے اور نہ مُلک پاکستان ۔ وجہ اکثر لوگوں کی دین اور حُب الوطنی سے بیگانگی ہے جس کی بنیاد حوص ہے جو زر ۔ زر اور زمیں میں سے کسی ایک یا دو یا تینوں سے ہو سکتی ہے ۔ ہر آدمی کسی چیز کو اُس سانچے میں دیکھتا ہے جو اۃس تعلیم یا تربیت یا ماحول نے تعمیر کیا ہوتا ہے ۔ آدمی سمجھتا ہے کہ جو وہ دیکھ رہا ہے وہ ویسا ہی ہے مگر ہمیشہ وہ ویسا نہیں ہوتا ۔ ایک آدمی جو بظاہر لطیفے باز یا کھلنڈرا لگتا ہے حقیقت میں ایک اچھی اور ہمدرد سوچ رکھنے والا محنتی اور مددگار آدمی ہو سکتا ہے ۔ اسی طرح ایک آدمی جو بڑا مذہبی لگتا ہے روزانہ پانچوں وقت مسجد مین نظر آتاہے اور خیرات کرتا دکھائی دیتا ہے ۔ ضروری نہین کہ وہ آدمی اللہ کا بندہ ہو ۔
    خیال رکھیئے کہ اللہ سُبھانۃہُ و تعالٰی کا فرمان اٹل ہے باقی سب ہیچ ہے ۔ سورت 29 عنکبوت آیت 45 ۔ اِنَّ الصَّلٰوۃَ تَنۡہٰی عَنِ الۡفَحۡشَآءِ وَ الۡمُنۡکَرِ ۔ ترجمہ ۔ کچھ شک نہیں کہ نماز بےحیائی اور بری باتوں سے روکتی ہے
    پھر اگر پانچ وقت کا نمازی برے کام کرتا ہے تو واضح ہے کہ جو آپ دیکھ رہے ہیں اس کے پیچھے کوئی برائی چھپی ہے

  5. معذرت ۔ لاپرواہی کی وجہ سے ”ہوّس“ کو ”حوص“ لکھ دیا

  6. سماجی شناخت اور فکری قحط سالی کے عنوان سے شاکر عزیز اپنے بلاگ پہ رائے دیتے ہوئے گویا ہیں ۔ ۔”مزے کی بات یہ ہے کہ دو قومی نظریے کے مطابق برصغیر کو جغرافیائی بنیادوں پر تقسیم نہیں ہونا چاہیئے تھا۔ اگر ہوتا تو سارے مسلمان ایک طرف، ہندو ایک طرف، سکھ ایک طرف، عیسائی ایک طرف، پ
    http://pakcom.wordpress.com/2013/05/03/%D9%86%D8%B8%D8%B1%DB%8C%DB%81-%D9%BE%D8%A7%DA%A9%D8%B3%D8%AA%D8%A7%D9%86-%D8%A7%D9%88%D8%B1-%D8%A8%DB%92-%D8%AA%D9%8F%DA%A9%DB%8C-%D8%AA%D9%86%D9%82%DB%8C%D8%AF-%DA%A9%D8%A7-%D9%81%DB%8C%D8%B4/

  7. ایک مزید تفصیلی تحریر اس موضوع پر بھی لکھ دیں کہ
    ریاست کو فوقیت دینے کا مطلب ہے آپ مذہب کے علاوہ ایک اور شناخت کو تسلیم کر رہے ہیں۔ آپ کے اولین موقف کے مطابق مذہب اُولی ہے پھر اس پر ریاست کو ترجیح کیوں؟ براہِ کرم پاکستان اور اسلام کو مکس نہ کریں آپ کو بھی پتا ہے اور مجھے بھی کہ اسلام اور پاکستان دو مختلف حقیقتوں کا نام ہے۔ نہ یہ ایک دوسرے کے ہم معنی ہیں، نہ ایک دوسرے کی جگہ استعمال ہو سکتے ہیں۔ جب ریاست کو مذہب پر مقدم رکھا گیا تو مان لیا گیا کہ مذہب ہی سب کچھ نہیں۔
    اگر آج آپ ریاستِ پاکستان کو بھارت سے اور بھارتی مسلمانوں سےالگ سمجھتے ہیں (دلوں کے دھڑکنے کی باتیں چھوڑیں عملی اقدام ہو تو بتائیں)، تو اس کا مطلب ہے کہ پاکستان کی تخلیق میں صرف "نظریہ پاکستان" کو گھسیڑنا تاریخ کے ساتھ زیادتی ہے۔ مطالعہ پاکستان جو بھی کہتی رہے آج کی حقیقت یہ ہے کہ "نظریہ پاکستان" اس ملک کے لیے گڑا مردہ بن چکا ہے۔ اگر یہ "نظریہ" اتنا ہی قابلِ عمل ہوتا تو بنگالی الگ نہ ہوتے، بلوچ اور سندھی قوم پرست اُدھم نہ مچائے ہوتے۔ اسرائیل نظریاتی ملک ہے اس میں قوم پرستی تحریک کا علم ہو تو مطلع کریں، یا کوئی بنگلہ دیش اسرائیل سے الگ ہوا ہو تو علم میں اضافہ فرمائیں۔
    "نظریہ پاکستان" کے وڈوں کو اس پر بات کرنے سے بات پاکستان کی بنیادیں کھودنے تک جاتی کیوں محسوس ہوتی ہے؟ پورے مضمون میں کہاں کہا ہے کہ پاکستان کو نہیں ہونا چاہئے؟ یہاں تو ریکارڈ کی درستی کی بات ہو رہی ہے، ذرا آئینہ دکھایا جا رہا ہے کہ "نظریہ پاکستان" کام نہیں دے رہا، کسی اور چیز کی بھی ضرورت ہے۔ لیکن یہاں نظریاتی ٹھیکداروں کو آئین کی خلاف ورزی یاد آ جاتی ہے، پھر ایمان پر شک ہونے لگتا ہے۔ کیا نظریے والوں نے پاکستان کا ٹھیکا لے رکھا ہے؟ پاکستان جتنا نظریے والوں کا ہے اتنا ہی میرے جیسوں کا بھی ہے۔ یہاں اصلاحِ احوال کا مطالبہ ہو رہا ہے، ریکارڈ درست کرنے کی بات ہو رہی ہے۔ یہ ملک ایک حقیقت ہے اور اس حقیقت کے پیچھے صرف "نظریہ پاکستان" اور مذہب ہی نہیں، اور بھی بہت سے عوامل کار فرما ہیں۔ آپ حقیقت کو سادہ کر کے دیکھنا چاہیں تو بسم اللہ۔ ہمیں تو اتنا پتا ہے کہ اگر یہ ملک صرف ایک نظریے کی پیدائش ہوتا تو بنگلہ دیش زبان، قومیت اور جغرافیے کی بنا پر الگ نہ ہوتا۔

  8. محترم ۔ آپ کچھ مطالعہ کیجئے ۔ یوں محسوس ہوتا ہے کہ آپ کو دو قومی نظریہ کا کچھ علم نہیں کیا کیا ہوتا ہے اور نہ جغرافیائی حدود کا کا علم ہے ۔ آپ کی تشریح لی جائے تو سیّدنا ﷺ نے مدینہ منورہ میں جو مسلمان ریاست قائم کی اور خلفائے راشدین رضی اللہ عنہم نے جو کچھ کیا وہ سب دین کی بنیاد پر نہ تھا اور اُنہوں نے بھی اپنی امارت سے باہر رہنے والے مسلمانوں کو باہر چھوڑ دیا تھا
    جھاڑو پھیرنے سے قبل دیکھ لیا جاتا ہے کہ زمین صفائی مانگتی ہے یا نہیں

    آپ نے اسرئیل کی مثال بھی غلط دی ہے ۔ اسرائیل مذہبی بنیاد پر قائم ہوا ہوتا تو اسے کے خلاف فلسطین کے اصلی یہودی باشندے اور 500 امریکی یہودی پیشوا اس کے خلاف احتجاج نہ کرتے ۔ اسرائیل کے اندر بھی ایک حکومے مخالف گروہ موجود ہے جس کا سربرہ شمیر تھا ۔ اب معلوم نہیں کون ہے ۔ آپ کی اطلاع کیلئے لکھ دیتا ہوں کہ اسرائیلی حکومت صیہونی ہے یہودی نہیں ہے اور یہ یورپ اور روس کے دہشتگردوں کی حکومت ہے جن سے جان چھڑانے کیلئے روس برطانیہ اور امریکہ نے انہیں فلسطین میں حکومت بنا کر دی اور اب تک اس کی پشت پناہی کرتے ہیں ۔ امریکہ ہر سال 3 بلین ڈالر کی ناقابلِ واپسی امداد دیتا ہے اور اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل میں اسرائیل کے خلاف پیش کی جانے والی ہر قرارداد کو ویٹو کرتا ہے ۔ اسرائیل کی پیدائش کے متعلق ایک تحقیق یہاں موجود ہے
    http://www.theajmals.com/blog/%D8%A8%D9%86%DB%8C-%D8%A7%D8%B3%D8%B1%D8%A7%D8%A1%DB%8C%D9%84-%D8%A7%D9%88%D8%B1-%D8%B1%DB%8C%D8%A7%D8%B3%D8%AA-%D8%A7%D8%B3%D8%B1%D8%A7%D8%A6%DB%8C%D9%84/

ایک تبصرہ شائع کریں

براہ کرم تبصرہ اردو میں لکھیں۔
ناشائستہ، ذاتیات کو نشانہ بنانیوالے اور اخلاق سے گرے ہوئے تبصرے حذف کر دئیے جائیں گے۔