اتوار، 30 ستمبر، 2007

محب علوی

11 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 10:36 AM ,

محب علوی نال میرا ایک معاہدہ ہویا سی کے او میرے اُتے لکھن گے تے فیر میں کاؤنٹر اٹیک کراں گا۔ لیکن عرصہ ہویا ایس گل نوں۔ اج اونھاں نال گل ہورہی سی تے میں سوچیا چلو اے وی فرض ادا کردے چلئیے۔ چونکہ معاہدے دے مطابق میں کاؤنٹر اٹیک کرناں سی ایس لئی اردو دی جگہ پنجابی وچ لکھن لگا واں۔


محب علوی مینوں ہن تے یاد وی نئیں آؤنداں محفل سے کدوں آیا سی۔ لگدا اے جیویں اے ہمیشہ توں محفل تے سی۔ تسی یقین کرو یا نہ کرو زندگی وچ پہلی دفعہ جس علوی نال ملیا او محب علوی سی۔ حالانکہ شادی شہداء بندہ اے لیکن ایدے کم کاکیاں والے نیں۔


ٹیلی فون کرے گا تے پونا کینٹا کتے نئیں گیا۔ مینوں تے اینج لگدا اے فون اَک کے ایدے ہتھوں نکل کے نسدا اے تے اے کال مکاؤندا اے۔ اردو واسطے کجھ کرن دا جذبہ ایدے اندر ٹھاٹھاں ماردا اے۔ اے ٹھاٹھاں کس قسم دیاں نیں میں کجھ کہہ نئیں سکدا۔ شاید اُچی اڈی والے سینڈل دیاں ٹھاٹھاں۔


ہون نوں بہت کجھ ہوسکدا اے، لیکن اے ایسا بندا اے جیڑا بہت کجھ کرسکدا اے۔ گلاں اینج سناؤندا اے کہ اگلا بندہ کہندا اے بس دنیا تے اے ہو ای اے۔ ایدی ایسے خاصیت دی وجہ توں اینھوں اردو لائبریری دا افسر تعلقات عامہ بنایا گیا اے۔ اردو ٹیک تے گیا تے اوتھے وی سائیاں اینھوں مزدوراں دا ہیڈ بنا چھڈیا۔


سٹیٹ لائف والیاں دی بدقسمتی کہ اونھاں نو نئیں مل سکیا چکانویں دے کے سافٹ وئیر پروگرامنگ ول آگیا۔ ورنہ ایدھے لچھن انشورنش ایجنٹاں والے نیں۔ گلاں گلاں وچ بیمار نو کھڑا کر دوے دے کھڑے نوں لمے پا دوے وچارہ ہائے ہائے کردا پھرے۔ چنگے پلے بندے نوں زمینوں چک کے اسمانیں چڑھا دندا اے۔ فیر آپ بے نیازی نال اگے ودھ جاندا اے پچھوں پانویں او غریب اپنی ہڈی پسلی تڑا بیٹھے۔


شروع شروع چ مینوں وی اسمانیں چڑھایا۔ لیکن شکر اے بچ بچا ہوگیا۔ ورنہ مینوں اپنے آپ وچ او او خوبیاں نظر آؤن لگ پیاں سی جہیڑیاں کدی میں خواب وچ وی نئیں سی سوچیاں۔ ایہو جئے بندے کولوں تے بندہ سڑ وی نئیں سکدا۔ بھئی سڑے کس چیز تے، الٹا آپ تھلے بے کے تہانوں گڈی وانگ اسمانیں چاڑھد دندا ے۔


کوئی پراجیکٹ چلاؤنا ایدے کھبے ہتھ دی مار اے۔ ساریاں نوں ایک دفعہ تے گھن چکر بنا دیندا اے۔ فلانیاں نوں وی آجا ٹینگڑیا توں وی آجا۔ ایسے ایسے بندیاں نوں لے آؤندا اے کہ تسی سوچ وی نئیں سکدے۔ لوکیں نا نا کرکے وی کم کرجاندے نیں۔ بس اینھاں ای، ہاں ٹھیک اے اینھاں ای۔ اچھا تھوڑا جئا ہور چل دے اے وی۔تے اینیں دیر وچ کم ای مک گی ہندا اے۔


میں مشورہ دواں گا جنھاں ماواں دے بچے سکول نئیں جاندے، کوڑی دوائی پین لگے تنگ کردے نیں۔ او چینی دی بجائے محب علوی نوں ٹرائی کرن انشاءاللہ افاقہ ہوئے گا۔


ایس بندے دا ناں محب علوی نئیں محبوب علوی ہوناں چائیدا سی۔ اردو نال محبت رکھن والے محب علوی نال وی محبت رکھدے نیں۔ اے علیحدہ گل اے کہ پاء جی ہوراں دا اصل ناں فاروق ظفر اے۔ مینوں ایس ایم ظفر دے کوئی قریبی شریبی لگے نیں، شاید ایسے وجہ توں محب علوی کہلواؤندے نیں۔


خیر سانوں یار دی یاری نال غرض۔ محب علوی سدا خوش رہوے۔ بیبا بندا اے۔ (نہ بی بی نا بابا، بلکہ بی با رب جانے کیس سیانے نے اے لفظ ایجاد کیتا سی خیر چھڈو تسیں اگے پڑھو) دعا اے ایدا ساڈا تے اردو دا ساتھ سدا قائم رہے۔ اور آ

جمعہ، 28 ستمبر، 2007

امید

0 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 1:34 PM ,

چیف جسٹس معطل ہوئے تو پوری قوم کو جیسے 440 وولٹ کا کرنٹ لگ گیا۔ اس وقت تک سب چین سے نہیں بیٹھے جب تک چیف جسٹس بحال نہیں ہوگئے۔ چیف جسٹس بحال کیا ہوئے سب کی نظریں ان پر لگ گئیں جیسے اب سب کچھ ٹھیک ہوجائے گا۔ ہماری یہ بڑی بری عادت ہے کہ اتنی جلدی امید لگا لیتے ہیں جیسے ابھی کوئی معجزہ ہوگا، جادو کی چھڑی گھومے گی، کوئی چھومنتر کہے گا اور سب کچھ ٹھیک ہوجائے گا۔


آج بی بی سی کی خبر کے مطابق سپریم کورٹ کے نو رکنی بینچ نے صدر مشرف کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے آئینی درخواستیں خارج کردی ہیں۔ اس قسم کے آثار ججوں کے تبصروں سے ہی دکھ رہے تھے۔ جانے اس خبر سے کتنوں کو دھچکا لگے گا۔ جانے کتنے بے ہوش ہونگے، چاہے کسی کا دم ہی نکل جائے۔ اور کتنے غصے میں آکر سپریم کورٹ کو طنز کا نشانہ بنائیں گے۔


لیکن سوچنے کی بات یہ ہے کہ جب پورے جسم پر سڑے ہوئے زخم ہوں تو ان کا علاج کیا ایک دن میں ہوجاتا ہے؟ نہیں ہوتا۔ یہی حال ہمارا ہے۔ بحیثیت قوم ہماری کیفیت کوڑھ کے مریض جیسی ہے۔ جو اس بات کا منتظر ہے کہ آسمان سے بارش ہوگی اور اپنے ساتھ اس کے کوڑھ زدہ زخموں کو بہا لے جائے گی۔


لیکن یہ اس کی بھول ہے۔ کوڑھ صدیوں کی کاشت ہوتی ہے۔اور اسے ٹھیک ہونے میں بھی اتنا ہی عرصہ چاہیے۔ پاکستانی قوم کا کوڑھ عشروں کی کاشت ہے۔ یہ اتنی جلدی نہیں جانے والا۔


جن کی امیدیں ٹوٹیں مجھے بڑا افسوس ہے۔ لیکن مجھے لگ رہا ہے کہ یہی حال باقی امیدوں کا بھی ہوگا۔ پرویز مشرف پھر سے صدر منتخب ہوجائے گا۔ حزب اختلاف کے استعفے بے کار جائیں گے۔ یہ لوگ عوام کو اس ایشو پر بھی سڑکوں پر لانے میں ناکام رہیں گے۔ کاروبار زندگی ایسے ہی چلتا رہے گا۔ گدھے کام کرتے رہیں گے ۔ ان کے رکھوالے موج کرتے رہیں گے۔ بس ہوگا یہ کہ گدھوں پر بوجھ کچھ مزید بڑھ جائے گا۔ کچھ مہنگائی ہوجائے گی۔ کچھ ٹیکس اور لگ جائیں گے۔ یہ جو غبارے میں پریشر بڑھا ہوا تھا۔ بڑے پیار سے آہستہ آہستہ نکل جائے گا۔


ہاں ایک راستہ ہے۔ جیسے ایران میں ہوا تھا۔ ایک خونی انقلاب، جو شاید اس قوم کی تقدیر کو بدل دے ۔ لیکن انقلاب بہت کچھ بہا لے جاتے ہیں۔ ماؤں کے بیٹے، بہنوں کے بھائی، سہاگنوں کے تاج اور بچوں کے والی۔ اگر انقلاب نہیں تو پھر نشتر بہت احتیاط سے چلانا ہوگا۔ تاکہ صحت یابی بھی ہو اور خون بھی کم نکلے۔ اسی سلسلے کی ایک کڑی، محفل پر کچھ گفتگو ہورہی ہے۔ بس یونہی ہمیں لگا شاید ہم کچھ کرسکتے ہیں۔ آپ کا خیال اگر ہم سے ملتا ہے، کہ ہم میں دم ہے ابھی، کچھ کرسکتے ہیں۔ تو آئیے شاید ہم سچ میں ہی کچھ کرسکیں۔


وسلام


 

بدھ، 26 ستمبر، 2007

بسم اللہ

18 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 1:12 PM ,

ساڈے ابا جی فرماؤندے ہندے نیں کُنڈ چک لیا تے نچن توں کی ڈرنا۔ میں اج سویرے سوچیا بندیا تو بلاگ لکھدا ایں تے اپنی ماں بولی وچ وی لکھ۔ چلو وکھرا بلاگ نئیں اردو بلاگ وچ ای ایک پاسے اینھوں جگہ دے لے۔ ایسے خیال دا عملی نمونہ تہاڈے سامنے پیش اے۔


میری پنجابی جدوں لکھن لگیاں تاں پتا لگیا اے اینیں چنگی وی نئیں۔ ایویں اردو وڑ وڑ جاندی اے۔ لفظ ای کوئی نئیں ہیگا کول لکھن واسطے۔ پنجابی اسیں صرف طنز تے ہاسے واسطے رکھی ہوئی اے۔ پنجابی وچ لکھن دا خیال مینوں پشتو تے سندھی بلاگ ویکھ کے آیا۔ سادے او پرا اپنی ماں بولی وچ لکھ سکدے نیں تے اساں کیوں نئیں۔


چلو اے تے اج دے بلیٹن دا ابتدائیہ سی۔ کجھ اج دا حال سن لو۔ ہونا کی سی۔ ایک پرچہ سی ساڈا ناں اودا ایڈوانسڈ انگلش گرامرز۔ سمجھ لو جداں بکرے لئی قصائی ہندا اے یا ڈکیتاں وچ سردار اوداں ای اے پرچا سارے پرچیاں دا پیو سی۔


اسیں سویرے سُقنے پئے ہوئے ساں رب جانے کی بننی اے۔ کئیاں تے سوچ لیا سی کہ اج صئی منجی ٹھک سیں۔ منجی ٹھکنا نئیں سمجھے تے اپنے کسے پنجابی بولن والے یار کو سمجھ لیا جے۔ اے خاص اصطلاح اے تے ترجمہ کردیاں اوکھا جیا کم اے۔


گل ہورہی سی پرچے دی، لو جی جدوں آیا تے سارے گلے شکوے پُل گئے۔ ایڈا اٰسان پرچہ۔ نہ پچھو۔ بس آپاں پندرہ منٹ پہلے کیتا اے تے فیر نالدیاں دے سر کھادے نیں۔ گانے گا کے تے فقرے کس کے۔


لیکن ساڈی ٹینشن مک گئی ہے۔


سناؤ سجنو کیسا لگا پنجابی بلیٹن؟ انشاءاللہ اے ہون باقیدہ چلیا کرے گا ایس بلاگ تے۔ امید اے دوسرے پنجابی یار وی پنجابی وچ لکھن گے۔ میری املاء کجھ غلط اے، اردو دے الفاظ استعمال کر جاناں واں لیکن ہولی ہولی عادت پے جائے گی۔ پہلی کوشش کیتی اے زندگی وچ پنجابی لکھن دی۔ الفاظ دی املاء بولن دے مطابق بناون دی کوشش کیتی اے۔ غلط ہووے تے درگزر کرنا.


اجازت دیو رب راکھا


 


 

سوموار، 24 ستمبر، 2007

ورڈپریس 2.3 کے ٹیگ پلگ انز

0 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 9:57 PM ,

ورڈپریس ابھی آیا نہیں لیکن ڈھنڈورا گلی گلی پٹ رہا ہے۔ ورڈپریس والوں نے سادہ ٹیگ متعارف کروائے ہیں یار لوگوں نے اس بنیاد پر تین تین منزلہ پلازے کھڑے کرلیے ہیں۔ دو پلگ انز ملے ہیں دونوں ہی مجھے پسند آئے ہیں اگرچہ دونوں ہی میرے ہاں کام نہیں کررہے۔


آپ پریشان نہ ہوں آپ کے ہاں لازمی کریں گے۔ میرے پوسٹ پیج پر تو ٹنی ایم سی ای بھی عرصہ ہوا نہیں چلتا۔ چونکہ مجھے ورڈپریس سے پنگے بازی کی عادت ہے اس لیے سارا پوسٹ پیج تب سے ہی خراب ہے۔ اور سرور بھی ایسا ناراض ہوا ہے کہ کئی اپگریڈوں کے بعد بھی حالات ویسے ہیں ہیں۔ مجھے نبیل کا اردو کردہ ایف سی کے ایڈیٹر استعمال کرنا پڑتا ہے۔


خیر آپ اس کو چھوڑیں اور یہ پلگ انز دیکھیں۔ کیا شاندار چیز ہے۔ اور اجمل صاحب کے لیے خصوصًا: ورڈپریس ڈاٹ کوم پر ٹیگ کی سپورٹ شامل کردی گئ ہے۔ آپ اپنے پوسٹ پیج پر تحریر خانے کے نیچے ایک اور خانہ دیکھ سکتے ہیں جو کہ ٹیگز دینے کا ہے۔


ایڈوانسڈ ٹیگ انٹری



یہ پلگ ان آپ کے پوسٹ پیج کو خاصا لمبا کردیتا ہے۔ ٹیگ کا سلگ شامل کرنے کی سہولت مجھے کام کی لگی ہے اس طرح ٹیگ اردو ہونگے اور ان کا ربط انگریزی بنے گا۔ یعنی کیٹگری سلگ کی طرح اردو انگریزی دونوں۔


کلک ٹیگز



کلک سے ٹیگ شامل کرنے کے لیے اچھی چیز ہے۔ بالکل ویجٹ پلگ ان کی طرح اپنے ٹیگز کو ماؤس سے گھسیٹیے اور موج کیجیے۔


وسلام

تھیم میں ورڈپریس ٹیگ سپورٹ

0 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:02 AM ,

آج  ورڈپریس والوں کو اپنا ورژن 2٫3 جاری کرنا تھا لیکن جانے کیوں نئے لوگوں کی آمد کا راگ الاپا جارہا ہے لیکن نیا ورژن نہیں جاری کیا گیا۔ خیر ہم نے تو صبح ہی اشاعتی امیدوار نمبر ایک یعنی آر سی ون پر اپنا بلاگ اپگریڈ کرلیا تھا اور تھیم میں دو پی ایچ پی فنکشن ڈال لیے تھے۔ آپ بھی یہ کرلیں۔ اگر ڈویلپمنٹ ورژن میں پڑ کر بلاگ داؤ پر لگانے کا موڈ نہیں تو ایک آدھ دن تک مستحکم اشاعت کا انتظار کریں تب تک اپنے تھیم میں یہ دو فنکشن شامل کرلیں۔ ایک فنکشن آپ کو انڈیکس اور سنگل پوسٹ پی ایچ پی میں شامل کرنا پڑے گا تاکہ پوسٹ کے میٹا میں ٹیگز بھی شامل ہوجائیں اور دوسرا ایک طرف سائیڈ بار یا نیچے فوٹر کے قریب شامل کرنا ہوگا تاکہ ٹیگز کا جھگھٹا (Tag Cloud) بھی نظر آسکے۔


تو اپنے تھیم کی مین انڈیکس ٹیمپلیٹ فائل کو کھولیں۔ اس میں یہ والا کوڈ تلاش کریں۔


َ

<?php while( have_posts() ) : the_post(); ?>
<div class="post" id="post-<?php the_ID(); ?>">
<h2><a href="<?php the_permalink() ?>" rel="bookmark" title="Permanent Link to <?php the_title(); ?>">
<?php the_title(); ?></a></h2>
<?php the_category( ', ' ); ?> <?php the_author(); ?> <?php the_time('F jS, Y'); ?>
<?php edit_post_link('Edit',' ',''); ?> <br/> <?php comments_popup_link('No Comments', '1 Comment', '% Comments'); ?>
<?php the_content(); ?>
</div>
<?php endwhile; ?>


ورڈپریس والے اسے لوپ کہتے ہیں۔ اس میں پوسٹ کے اوپر نظر آنے والی معلومات جیسے تاریخ وغیرہ شامل ہوتی ہیں۔ آپ اس میں یہ فنکش بھی شامل کردیں تو انڈیکس کے تحت نظر آنے والی تمام تحاریر میں ٹیگ بھی نظر آئیں گے۔



<?php the_tags(‘before’, ’separator’, ‘after’); ?>



یہ ٹیگ شامل کرنے کا ایک سٹائل ہے۔ مزید سٹائل یہ ہوسکتے ہیں۔


ہر ٹیگ نئی لائن میں:


<?php the_tags('Tags:'',''<br />'); ?>



تیر کے ساتھ الگ کئے گئے ٹیگز



<?php the_tags('Social tagging: ',' > '); ?>


وغیرہ وغیرہ۔ پسندیہدہ کوڈ کو آپ کونٹنیٹ فنکشن کے اوپر یا نیچے جہاں چاہیں شامل کردیں۔ ذاتی طور پر میں نے انھیں نیچے ہی شامل کیا ہے چونکہ یہ انگریزی میں ہونگے زیادہ تر۔ اگلی بات ہے ٹیگ جمگھٹے کی اس کو آپ سائیڈ بار میں شامل کردیں۔ سادہ سا کوڈ یہ ہوسکتا ہے۔


 

<?php if ( function_exists('wp_tag_cloud') ) : ?>
<li>
<h2>Popular Tags</h2>
<ul>
<?php wp_tag_cloud('smallest=8&largest=22'); ?>
</ul>
</li>

<?php endif; ?>


ٹیگ آپ کے پوسٹ پیج پر تحریر خانے کے نیچے ایک اور خانے میں دئیے جاسکتے ہیں۔ اس تحریر کے لیے میں نے ورڈپریس کوڈکس کے ان موضوعات ایک اور دو اور اس بلاگ سے استفادہ کیا ہے۔ 










اتوار، 23 ستمبر، 2007

عام سے لوگ اور عام سی باتیں

3 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 3:05 AM ,

کئی دن سے ایک رسالہ لائبریری سے آیا ہوا تھا کل وہ واپس دینے گیا تو وہاں باتوں ہی باتوں میں وہی عام سی باتیں شروع ہوگئیں۔


لائبریرین عرفان بھائی نے حسب معمول کاروبار کا موضوع چھیڑ دیا۔ کہنے لگے کچھ بھی نہیں رہا۔ دونمبر کام کرنے والوں کے مزے ہیں اور مزدور آدمی کو دو وقت کی روٹی ملنا مشکل سے مشکل ترین ہوگئی ہے۔ گندم چھ سو روپے من ہوگئی ہے۔ لائبریری کا طریقہ کار یہ ہے کہ کتاب کی رقم کے برابر سیکیورٹی رکھوا کر پھر کتاب کرائے پر ایشو کی جاتی ہے۔ بتانے لگے اب لوگ پیسے رکھنے سے کترانے لگے ہیں۔ کسی کا دو سو روپیہ بھی جمع ہے تو کہتا ہے بس واپس کردو۔


عرفان بھائی لائبریری کو سروے پلیس کہتے ہیں۔  ہر طرح کے لوگ یہاں آتے ہیں تو سروے خود ہی ہوجاتا ہے۔ اور ان کے اس سروے کے مطابق عام آدمی اس وقت ایسی حالت میں ہے جیسے کسی نے گِچی(گردن)  سے کَس کر پکڑ رکھا ہو۔ ایک خاتون کا قصہ سنانے لگے کہ اس دن آئی تو کہنے لگی عرفان بھائی رمضان ہے بچے افطار کے وقت سیب مانگتے ہیں کہاں سے لا کر دیں اتنے مہنگے ہیں۔ پھر خود ہی سبزیوں کے ریٹ بتانے لگے کہ ستر روپے تک کلو  ہوگئی ہیں۔ کریلے اور ٹینڈے جنھیں میرے جیسے منہ لگانا پسند نہیں کرتے تھے اب قریب نہیں آنے دیتے۔ آٹے جیسی بنیادی ضرورت کی چیز نہیں مل رہی۔ حکومت والے کہتے ہیں یوٹیلٹی سٹور پر دستیاب ہے۔ ان کے باپ کے نوکر ہیں جو یوٹیلٹی سٹور سے جاکر قطاروں میں لگ کر یوٹیلٹی سٹور والے کی منتیں کرکے ساتھ اور بھی زبردستی کی خریداری کرکے آٹا لیں۔


عام سی باتیں کرتے کرتے کئی اور دوست اکٹھے ہوگئے اور پھر بات مشرف کے الیکشن تک پہنچ گئی۔ ایک دوست کا خیال تھا اس قوم کو چھِتر ہی پڑنے چاہئیں۔ نہ یہ ان لیڈروں کو منتخب کرے اور نہ وہ ان کا استحصال کریں۔ عرفان بھائی کا خیال تھا کہ کون ایسا کرے۔ کوئی بھی نہیں کرے گا۔ ہمارے اندر اتحاد کی کمی ہے اور سب سے بڑھ کر لیڈرشپ موجود نہیں۔ اس سوال پر کہ لیڈرشپ کہاں سے آئے وہ بولے ہم تو یہ نہیں کرسکتے اب تو یہ نوجوانوں کا کام ہے۔ وہ آگے بڑھیں۔


اور میں سوچنے لگا کہ نوجوان کیا کررہے ہیں۔ نوجوان کراچی میں ہیں تو لسانی مذہبی تنظیموں کے چنگل میں پھنس کر اپنا آپ گنوا رہے ہیں۔ نوجوان پنجاب میں ہیں تو انھیں دو وقت کی روٹی کی فکر ہے یا یہ کہ اچھی نوکری مل جائے پڑھ لکھ کر۔ نوجوان سرحد اور بلوچستان میں ہیں تو اتنے زہریلے اور کڑوے کہ اپنوں کو ہی ڈنک مار رہے ہیں۔ اور ان کے علاوہ باقی قوم؟


باقی قوم دو وقت کی روٹی کی فکر میں بھاگے چلے جارہی ہے بھاگے چلے جارہی ہے۔ تَیلی کے بیل کی طرح ایک ہی دائرے میں صبح شام شام رات رات صبح پھر شام اور یہی چکر ازل سے ابد حتٰی کہ ایک دن لڑکھڑا کر گرتے ہیں اور مرجاتے ہیں۔ ان کی جگہ نیا بندہ لاکر کھڑا کردیا جاتا ہے پھر وہی چکر۔


اور لیڈر کیا کررہے ہیں۔ لیڈروں کو اپنی کرسیاں بچانے کی پڑی ہے۔ منافع کی پڑی ہے۔ اب اس چیز کو مہنگا کردو۔ اس کو بلیک کردو۔ یہ پرمٹ لے لو۔ اس بات یہ ڈیل کرلو۔ فلانا ہاتھ آیا ہے کام نکلوا لو۔ صدر کو اپنی صدارت کی ہے۔ وزیروں کو وزارت کی ہے۔ چوہدریوں کو چوہدراہٹ کی ہے۔


اگر آپ پاکستان کو اوپر سے دیکھیں تو ایسے لگے گا جیسے عام آدمی گلے کی بکریاں ہیں جو سرجھکائے بکریوں نہیں گدھوں کی طرح کام میں جتے ہوئے ہیں اور ان  کی رکھوالی کرنے والے آپس میں کتوں کی طرح ہڈی کے لیے لڑ رہے ہیں۔ دور کسی بلندی پر کوئی بیٹھا کچھ دیر بعد ان کے لیے ایک ہڈی پھینک دیتا ہے اور وہ پھر سے اس ہڈی کے لیے لڑنے لگتے ہیں۔


عجب طُرفہ تماشا ہے۔

ہفتہ، 22 ستمبر، 2007

ورڈپریس 2.3 سوموار کو آرہا ہے

4 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 1:25 AM ,

ورڈپریس 2.3 سوموار کو جاری کیا جارہا ہے۔ اس ورژن میں ٹیگز کی سپورٹ بھی شامل ہوگی۔ نئے ورژن میں شامل ٹیگز کے فیچر کو پرانے تھیمز میں شامل کرنے کے لیے ایک عدد ٹیوٹوریل انشاءاللہ اسی دن بلاگ پر پیش کردیا جائے گا۔

بدھ، 19 ستمبر، 2007

جگاڑ

8 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 2:19 AM ,

کراچی والے دوست تکے لگانے کو شاید جگاڑ لگانا بولتے ہیں۔ صاحبو آج ہم نے بھی ایک جگاڑ لگائی ہے۔ اس جگاڑ کو آپ ہمارے بلاگ کے سائیڈ بار میں ملاحظہ فرما سکتے ہیں۔


یہ گوگل تلاش ہے جس میں ہم نے اوپن پیڈ گھسیڑ دیا ہے۔ اب گوگل بیبے بچوں کی طرح اردو یونیکوڈ میں تلاش کرے گا۔


یہ سب ہوا کیسے؟ کافی پرانا قصہ ہے۔ایک بار جب قدیر نے گوگل کسٹم سرچ پیج بنایا تھا جس میں صرف اردو کے صفحات تلاشے جاسکتے تھے میں نے اسے یہ آئیڈیا دیا تھا کہ گوگل کی اصلی تے وڈی والی تلاش میں ویب پیڈ (اب اوپن پیڈ) شامل کیا جانا چاہیے۔ قدیر نے تو یہ کام نہیں کیا لیکن میں آج ایویں یہ سب کر بیٹھا۔


کرنا کچھ تھا کر کچھ لیا۔ اپنا گوگل ایڈ سینس کھولا تو مبلغ چار ڈالر کی آمدن دیکھ کر منہ میں پانی بھر آیا۔ سوچا بلاگ کو مزید "گوگلا" لوں۔ چناچہ اوپر اور دائیں اشتہارات موجود ہونے کے باوجود گوگل تلاش کا ایک اور آپشن ڈال دیا کہ مرغا کہیں تو پھنسے گا


مرغا کیا پھنستا ہم ایک بار پھر اردو کے چکر میں پھنس گئے۔ اپنے بلاگ کے تلاش خانے کو نیچے کیا اور اس کو اوپر کرکے اس میں ویب پیڈ کا کوڈ ڈالا۔ تھوڑی سی لیپا پوتی کی دو تین لیبل اردو کیے اور اب گوگل بیبا پاکستانی بچہ ہے۔ اگرچہ اس کی زبان انگریزی ہے لیکن کام یہ اردو والوں کے لیے کرے گا۔ غرض تھی کہ صارف اس سے تلاشے گا اور کہیں نہ کہیں کسی سپانسرڈ لنک پر جاپھنسے گا لیکن اب اردو ہوگیا تو کہاں کے لنک۔۔اردو میں تو سپانسرڈ لنک ہی نہیں۔ چلو خیر ہمیں یہ خوشی ہے کہ گوگل بغیر اردو سپورٹ کے اردو تلاش کردے گا۔


آپ بھی اپنے بلاگ میں اردو گوگل کو ڈال لیں۔ طریقہ بڑا سادہ سا ہے۔ گوگل ایڈسینس میں جائیں اپنے لیے ایڈسینس برائے تلاش منتخب کریں۔ پسند کے مطابق کوڈ سیٹ کرنے کے بعد اپنے بلاگ کے مطلوبہ حصے میں ڈال دیں۔


اس کے بعد اس کوڈ کا معائنہ کریں تو آپ کو یہ حصہ نظر آئے گا۔


<input type="text" name="q" size="31" maxlength="255" value="" id="sbi"></input>
بس اس کے نیچے اوپن پیڈ کو کال کرنے وال کوڈ ڈال دیں۔

<script language="javascript" type="text/javascript">makeUrduEditor("q", 16)</script>


یہاں یہ فرض کیا گیا ہے کہ اوپن پیڈ آپ کے تھیم میں پہلے سے شامل ہے۔ اگر ایسا نہیں تو اس کو پہلے اپنے تھیم کی ڈائرکٹری میں کاپی کریں اس کے بعد ہیڈر ڈاٹ پی ایچ پی فائل میں جاکر


</header>


کے ٹیگ سے فورًا اوپر یہ کوڈ ڈال دیں۔


<script type="text/javascript" src="<?php bloginfo('stylesheet_directory'); ?>/urdu-open-pad.js"></script>
<script type="text/javascript">
initUrduEditor();
</script>


ایک اور اللہ لوک سا کوڈ یہ ہے جو ویب پیڈ شدہ خانے میں زبان کو بدل سکتا ہے۔ یہی کام آپ کنٹرول سپیس سے بھی کرسکتے ہیں۔ ہمارے لینکس پر چونکہ سسٹم میں زبان بدلنے کا شارٹ کٹ بھی یہی ہے اس لیے زبان اردو پر اردو ہوجاتی ہے بجائے کہ انگریزی ہو۔ چناچہ ہمارے لیے تو یہ مجبوری ہے اگرچہ کافی بھدا سا لگ رہا ہے یہ۔ لیکن آپ اپنی مرضی کے مطابق اس کوڈ کو بھی ڈال سکتے ہیں۔ ورنہ کنٹرول جمع سپیس سے زبان بدلنے کا شارٹ کٹ ایک جملے میں بتا دیں۔


 English<input type="radio" value="English" name="toggle" onclick='setEnglish("q")'><font face="Urdu Naskh Asiatype">اردو</font><input type="radio" value="Urdu" checked name="toggle" onclick='setUrdu("q")'


یہی کام پی ایچ پی بی بی فورمز اور اردو ویب سائٹس کے ساتھ کیا جاسکتا ہے۔ اس طرح ایڈسینس کے ساتھ ساتھ گوگل پر اردو تلاش کو بھی فروغ ملے گا۔ شاید گوگل کو اس طرح اردو والوں پر کچھ رحم آجائے اور زیادہ استفسارات ملنے کی صورت میں اردو صفحات کی قدر بھی بڑھ جائے۔


وسلام

سوموار، 17 ستمبر، 2007

رمضان مبارک

4 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 11:07 AM ,

امید ہے سب دوست سجن بخیریت ہونگے۔


آج کل انٹرنیٹ پر میرا آنا بس فورمز تک ہی محدود ہے اپنے بلاگ کی طرف کم ہی دیکھتا ہوں۔ رمضان آئے اگرچہ کافی دن ہوچکے ہیں لیکن میری طرف سے دیر سے ہی سہی مبارکباد قبول کریں۔


کل میرا پہلا پرچہ ہے احباب سے درخواست ہے دعاؤں میں یاد رکھیے گا۔


وسلام

جمعرات، 6 ستمبر، 2007

واہ رے منصف تیری منصفی

16 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:47 PM ,

یہ فورمز پاکستان کے نام پر بنے ہیں۔ فورمز کا نام بھی فورمز ڈاٹ کوم ڈاٹ پی کے  ہے۔ لیکن ان کے کام دیکھیے۔


محمد علی مکی واویلا مچا رہے ہیں کہ ان کے فورم سے مواد چوری کرکرکے بغیر حوالہ دیے ان کے فورم پر ڈالا جارہا ہے اور جواب آتا ہے کہ اچھی چیز جہاں سے ملے لے لو۔ اچھی ڈھٹائی ہے بھئی۔۔۔۔



یہ ہمارا ہی خاصہ ہے کہ ڈھٹائی ہم پر آکر ختم ہے۔

ورڈپریس 2.3 بی ٹا اور اشتہارات

8 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 5:25 AM ,

نبیل بھائی نے کل جب یہ واضح کیا کہ محفل پر اشہتار ایسے ہی چل رہے ہیں تو ہم نے بھی اپنے بلاگ پر ایڈسینس کا کوڈ گھسیڑ ڈالا۔ اشتہار تو آرہے ہیں لیکن کچھ نامعقول قسم کے اشتہارات بھی ہیں۔ ان کا سادہ حل یہ ہے کہ کی ورڈز ٹھیک ہوں۔ اب اردو والے کہاں سے کی ورڈز لائیں؟


لیکن ورڈپریس 2.3 ایک نئی سہولت لے کر آرہا ہے۔ اسی میں ٹیگ لگانے کی سہولت بھی موجود ہے۔ اور میرا خیال ہے یہ انگریزی ٹیگ اگر پوسٹ کے ساتھ نمودار ہوں تو بغیر کسی غیر قانونیت اور دشواری کے یہ کی ورڈز کا کام کریں گے۔ اس طرح اشتہارات کی ٹارگٹنگ اچھی ہوسکے گی۔

منگل، 4 ستمبر، 2007

مجھے کوئی شک نہیں

0 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:59 PM ,

شک کرنا ٹھیک ہے۔ لیکن ہٹ دھرمی الگ قسم کی چیز ہے۔
میں نے آج سے دو سال پہلے ایک کتاب پڑھی تھی "طلاق؟" صاحب کا نام یاد نہیں لیکن انھوں نے طلاق کے سلسلے کے سارے احکام براہ راست قرآن  کریم کی آیات کے تراجم سے اخذ کیے۔ مجھے بڑا عجیب سا لگا۔ چونکہ وہ ایک جگہ ترجمے سے یہ ثابت کررہے تھے کہ طلاق ہوجانے کے بعد بھی جب چاہیں میاں بیوی نکاح کرسکتے ہیں۔ میری مراد تین طلاقوں کے بعد سے ہے۔ لیکن مجھے بڑا عجیب سا لگا تھا۔ بعد میں غور کیا تو انکشاف ہوا یہ صاحب قرآن سے ڈائریکٹ فیض لینے کے قائل ہیں۔
تب سے اب تک ایک بات پلے سے بندھی ہوئی ہے کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کو بائی پاس کرکے قرآن کو سمجھنا ایک تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان کے خلاف ہے نعوذ بااللہ، دوسرے پھر رحمت زحمت بن جاتی ہے۔ کہیں کی بات کہیں جانکلتی ہے۔
ایسے لوگوں کا خیال ہے کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے کی ایک بھی چیز خالص نہیں موجود۔ شاید دوسرے مذاہب کی طرح جنھوں نے اپنے انبیاء علیھم اسلام کی زندگیوں کو دیو مالا بنا ڈالا۔ لیکن وہ یہ بھول جاتے کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو ہماری طرح انسان کہا گیا  ہے اور ان کی زندگی کا ایک ایک پل ہمارے سامنے موجود ہے۔
یہ حجت کرنا کہ جانے کیا کیا ہوگیا ہوگا، یہ ہوگیا ہوگا، وہ ہوگیا ہوگا دل کے مرض کی نشانی ہیں۔ ہونے کو تو کچھ بھی ہوسکتا ہے، لیکن ہستی وہ ہے جس پر کم از کم تمام مسلمان متفق ہیں۔۔صلی اللہ علیہ وسلم۔۔واقعہ کربلا پر میں یہ دلیل مان سکتا ہوں کہ اس میں ہر ایک نے من پسند انداز میں‌ تبدیلیاں‌ کرڈالی ہونگی ۔۔۔لیکن حدیث رسول کے سلسلے میں کبھی نہیں۔۔۔۔ہاں کچھ احادیث ہوسکتا ہے قرآن سے میل نہ کھاتی ہوں اور وہ یقینًا ضعیف ہیں جن پر کئی کئی بار تحقیق ہوچکی ہوگی۔۔۔سو ان کو نہ لیا جائے۔۔۔لیکن یہ کیا کہ پوری کی پوری کتاب کو مسترد کردیا جائے۔۔۔۔
مجھے تو اتنا معلوم ہے جتنا بھی بے غیرت ہوں۔--بہت گنہار ہوں--لیکن اپنے رسول سائیں سے مجھے بہت محبت ہے ۔۔۔میں نے انھیں نہیں دیکھا بس ان کے بارے میں سنا ہے لیکن پھر بھی مجھے ان سے بہت محبت ہے۔۔
اور وہ جنھوں نے ان کو دیکھا۔۔صلی اللہ علیہ وسلم۔۔جنھوں نے ان کے دیکھنے والوں کو دیکھا۔۔۔۔۔صلی اللہ علیہ وسلم ۔۔۔ان کی محبت کیسی ہوگی۔۔۔بے شک وہ مجھ سے بہتر ہونگے۔۔بے شک انھوں نے ان کی زندگی کا ایک ایک پل محفوظ کرنے کے لیے محنت کی ہوگی۔۔۔
مجھے کوئی شک نہیں کہ میرے رسول سائیں صلی اللہ علیہ وسلم کی پوری زندگی میرے سامنے ایسے  ہے جیسے میں انھیں کھاتے پیتے چلتے پھرتے تصور کرسکتا ہوں۔۔۔
مجھے کوئی شک نہیں کہ وہ سراپا قرآن تھے اور ان کے چاہنے والوں نے ان کی زندگی کو بعد میں آنے والوں تک پہنچانے کے لیے نہایت مخلصانہ اور محبانہ کوششیں کیں۔۔۔

اتوار، 2 ستمبر، 2007

پھر توقع رکھو کہ تم پر آفتیں ایسے آئیں جیسے تسبیح ٹوٹ جانے سے دانے یکے بعد دیگرے گرتے ہیں

10 تبصرے, ارسال کردہ از Muhammad Shakir Aziz بوقت 4:28 AM ,

ایک کے بعد ایک، جیسے لائن میں لگی ہوئی آفتیں یکے بعد دیگرے وقوع پذیر ہورہی ہیں۔ اب کل کراچی میں پل گرگیا ہے۔ سنتے ہیں اپنے مشرف صاحب کے میگا پروجیکٹس، جن کا وہ تسبیح کی طرح ہی ہر انٹرویو میں ورد کیا کرتے ہیں یہ بھی حصہ تھا۔ اب ہوا کیا کہ این ایل سی کو بلیک لسٹ کردیا گیا ہے۔ چار پانچ لوگوں کو معطل کردیا گیا ہے۔ مرنے والوں کو امداد دی جارہی ہے ۔ اللہ اللہ خیر صلا


دو چار میں شور رہے گا پھر وہی پرانی صورت حال۔ سارا ناردرن بائی پاس دوبارہ تو بننے سے رہا۔۔اتنا حصہ پھر سے بن جائے گا اور کام پھر چلے گا۔ لیکن اس چیز کی کیا گارنٹی ہے کہ ایک حصہ گرگیا تو باقی حصے نہیں گریں گے۔ یہ پل تو دوبارہ بن جائے گا وہ چنے والا جو اپنے بچوں کا کفیل تھا، جس کے بچے یتیم ہوگئے ان کا کون سرپرست ہوگا اب۔ جو بیوائیں ہوگئیں ان کا کون رہ جائے گا۔ وہ پانچ پانچ لاکھ روپے؟؟


کراچی کے ناظم صاحب کو گلہ ہے کہ اس شہر کے 13 سرپرست ہیں اور یہ کہ انھیں اس پروجیکٹ کی ہوا بھی نہیں لگنے دی گئی، ان کے پاس ڈیزائن تک نہیں یہ وہ ۔ ہر کسی کو ایک دوسرے سے گلہ ہوگا۔۔اور ہم منہ دیکھیں گے الزام کس کو دیں۔۔۔


کبھی کبھی میں سوچتا ہوں کہ یہ جو آفتوں کی قطار لگی ہوئی ہے یہ ہمارے اپنے اعمال ہیں۔۔ہم ہیں ہی اس قابل کہ ہمیں چھتر پڑیں اور پڑتے ہی چلے جائیں۔۔۔